حلب میں سویلینز پر بمباری، بان کی مون کی مذمت

شہری آبادیوں پر بم برسانا وحشیانہ اقدام اور عالمی قانون کیخلاف ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے شام میں سویلینز کی جاری ہلاکتوں کی مذمت کی ہے خصوصا شہریوں پر کی جانے والی بمباری کی مذمت کی ہے۔

سیکرٹری جنرل نے شام میں مسلسل بڑھتے ہوئے اسلحے اور بارود کے استعمال پر تشویش ظاہر کی ہے اور کہا ہے کہ '' بیرل بموں کا آبادیوں پر استعمال وحشیانہ اقدام ہے۔

بان کی مون کے ترجمان مارٹن نیرسکی کے مطابق پچھلے چھ دنوں کے درمیان رجیم نے حلب شہر پر بمباری کر کے 250 شہریوں کی جان لی ہے۔ جن میں 76 بچے بھی شامل ہیں۔

سیکرٹری جنرل نے سویلینز کیخلاف اسلحے کے اس اندھے استعمال کی ایک مرتبہ پھر مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ یہ انسانی حقوق کے عالمی قوانین کے خلاف ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کا کہنا ہے کہ ہر شہری کو ہر طرح کی سیچیوایشن میں تحفظ دینا ضروری ہے۔ واضح رہے حلب شہر میں بمباری کی تازہ لہر ہفتے کے روز شروع ہوئی تھی۔

سیکرٹری جنرل نے تمام فریقںوں کو اسلحے کا استعمال کم کرنے اور تین سالہ خونی تصادم کا پر امن تصفیہ کرنے پر بھی زور دیا ہے۔

ادھر حمص شہر جس کے محصورین کی امداد کیلیے اب ایک معاہدہ ممکن ہوا ہے تقریبا ہر روز بمباری کا نشانہ بنتا رہا ہے۔ اب عالمی طاقتوں کی مداخلت کے بعد حمص میں انسانی بنیادوں پر بنیادی اشیائے ضروریہ پہنچانے کی امید پیدا ہوئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں