.

سعودی عرب: جنسی طور پر ہراساں کرنے کے2797 کیس رجسٹرڈ

مملکت میں جنسی تشدد کی روک تھام کے لیے آگاہی مہم جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے محکمہ مذہبی پولیس 'امر بالمعروف ونہی عن المنکر' کی ایک حالیہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پچھلے کچھ عرصے کے دوران مُملکت میں جنسی تشدد اور خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کے 2797 کیس رجسٹرڈ کیے گئے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق کہ مملکت میں سماجی جرائم میں نسبتا کمی واقع ہو رہی ہے اور ماضی کی نسبت جنسی تشدد جیسے گھناؤنے جرائم کی تعداد میں خاطر خواہ کمی واقع ہوئی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مذہبی پولیس کے زیراہتمام "یوتھ فورم" نے"میرا خاندان، آپ کا خاندان" کےعنوان سے ایک نئی آگاہی مہم شروع کر رکھی ہے، جس میں شہریوں پر زور دیا گیا ہے کہ وہ سماجی جرائم کی روک تھام کے لیے پولیس سے بھرپور تعاون کریں۔ اس مہم کے تحت شہریوں میں جنسی تشدد کی روک تھام کے طریقوں کے بارے میں عوام میں شعور پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

مذہبی پولیس کے یوتھ فورم کے جنرل سپروائز برائے اطلاعات انس الغامدی نے کہا کہ ان کی آگاہی مہم کو عوامی سطح پر غیر معمولی پذیرائی ملی ہے اور سوشل میڈیا پر اُنہیں بھرپور کوریج دی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سماجی رابطے کی ویب سائیٹ "ٹیوٹر" پر غیر معمولی سطح پر مہم کو پھیلایا جا رہا ہے۔

درایں اثناء جدہ میں امر بالمعروف ونہی عن المنکر کے ڈائریکٹر برائے فیلڈ آپریشن سلیمان علو نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ "یوتھ فورم " کی جانب سے جنسی تشدد کی روک تھام کے لیے شروع کی گئی آگاہی مہم میں شرکت کرکے مجھے بھی خوشی ہوئی ہے۔ میں اس طرح کی مہمات کو قوم کی خدمت تصور کرتا ہوں اور ایسی بامقصد مہمات میں ان کا ادارہ بھرپور تعاون کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ جنسی تشدد کا معاملہ پوری قوم کے لیے پریشانی کا باعث ہے۔ اسے نجات کے لیے پوری قوم کو مل کر کام کرنا اور سماج دشمن عناصر سے لڑنا ہو گا۔