.

فوج بھیجنے کیلیے یانوکووچ نے خط لکھا تھا، روس

روس نے سابق صدر یوکرائن کا خط سلامتی کونسل میں پیش کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ میں ماسکو کے نمائندے نے کہا ہے کہ روسی فوجوں کو یوکرائن آنے کی دعوت یوکرائن کے سابق صدر یانوکووچ نے دی تھی۔ اس مقصد کیلیے یانو کووچ نے صدر ولادی میر پیوٹن کو ایک خط لکھا تھا کہ روسی فوج یوکرائن میں امن و امان کا مسئلہ حل کرنے کیلیے کردار ادا کرے۔

روسی نمائندے وائٹلی چرکین نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایک ہنگامی اجلاس میں اس خط کا حوالہ دیتے ہوئے کہا '' یوکرائن میں مغربی ملکوں کے اثرات کی وجہ سے دہشت گردی کی کھلی کارروائیاں ہو رہی ہیں۔ '' ان کا کہنا تھا '' یوکرائن میں عام لوگوں کو لسانی اور سیاسی بنیادوں پر انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

اس لیے یانوکووچ نے اپنے خط میں لکھا '' میں اس صورت حال میں روسی صدر ولادی میر پیوٹن سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ روسی فیڈریشن کی افواج یوکرائن بھجوا کر قانون کی بالا دستی، امن ، استحکام قائم کرنے اور یوکرائنی عوام کی حفاظت میں مدد دیں۔''

سلامتی کونسل کے ارکان کو روسی نمائندے نے سابق یوکرائنی صدر کے خط کی کاپی بھی دکھائی۔ دریں اثناء روسی جیٹ طیاروں نے دو مرتبہ بحر اسود کے اوپر سے گذرتے ہوئے یوکرائنی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی۔