.

روسی سیاحوں کی مصر آمد میں 20 فیصد اضافے کی توقع

امن وامان کی خراب صورتحال کے باعث مغربی سیاح محتاط

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں گذشتہ ایک سال سے جاری داخلی شورش کے باعث سیاحت کا شعبہ بری طرح متاثر ہوا ہے لیکن اب آہستہ آہستہ غیر ملکی سیاحوں نے مصر کا رخ کرنا شروع کر دیا ہے۔ مصری حکومت کا دعوی ہے کہ رواں سال 28 لاکھ سیاحوں کی آمد سے ملک میں سیاحت کی رونقیں بڑھنے کا امکان ہے۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق یہ تعداد پچھلے سال کی نسبت 20 فی صد زیادہ ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ نے مصری محکمہ سیاحت اور ٹورزم کمپنیوں کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ روسی شہری پچھلے تین سال کے دوران بھی بڑی تعداد میں مصر کا رخ کرتے رہے ہیں۔ مصر کی داخلی سیکیورٹی اور سیاسی صورت حال کے باعث ماسکو کے انتباہ کے باوجود سیاحت کے دلدادہ افراد کو مصر کے سفر سےنہیں روکا جا سکا۔ روس کے علاوہ دوسرے ملکوں کے شہری مصر میں رونما ہونے والی پے در پے سیاسی تبدیلیوں اور شورش کے باعث نہایت محتاط رہے ہیں۔

مصری ائیر لائن کمپنی کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ ایک روز میں مصر کے چار ہوائی اڈوں پر 133 پروازیں کے ذریعے 17 ہزار 61 روسی سیاحوں کو لایا گیا۔

مصری وزارت سیاحت کے ڈائریکٹر برائےاسٹریٹیجک اینڈ پلاننگ عادل الجندی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ محکمہ سیاحت نے جو پلان ترتیب دیا ہے اس کے ثمرات رواں سال موسم گرما میں حاصل ہونا شروع جائیں گے۔

انہوں نے اعتراف کیا کہ مغربی ملکوں کی طرف سے اپنے شہریوں کو مصر کے سفر سے گریز کی ہدایات ہمارے سیاحت کے شعبے میں ایک بڑی رکاوٹ بن رہی ہیں۔ تاہم سیاحوں کی تعداد میں اضافے کے لیے عرب ممالک اور عالمی سطح پر توجہ مصر کی جانب مبذول کرانے کے لیے مسافروں کو زیادہ سے زیادہ سہولیات دینے کی کوششیں جاری ہیں۔ توقع ہے کہ پیش آئند چند ماہ میں مصری شعبہ سیاحت بڑی رکاوٹیں دور کر لے گا۔

مصر میں سیاحت کے شعبے میں سرگرم ایک بڑی فرم کے ڈائریکٹر عادل سالم کا کہنا ہے کہ گذشتہ چند برسوں کے دوران عالمی سیاحت کے شعبے کو نقصان پہنچا ہے، تاہم روسی سیاحوں نے مشکل حالات میں بھی اس کو سہارا دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے عادل سالم کا کہنا تھا کہ چند ماہ قبل طابا میں غیر ملکی سیاحوں کی ایک بس پر ہونے والے دہشت گردی کے حملے کے بعد غیر ملکی سیاح زیادہ محتاط ہو گئے ہیں تاہم حکومت نے دہشت گردی کے ناسور سے پوری قوت سے نمٹنےکا عزم کر رکھا ہے۔ سیاحت کے شعبے کو دہشت گردوں کے ہاتھوں تباہ نہیں ہونے دیں گے۔

مصری وزارت سیاحت کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق روسی سیاح کسی بھی دوسرے ملک سے زیادہ تعداد میں مصر کا رخ کرتے ہیں۔ سنہ 2010ء میں 28 لاکھ روسی سیاح مصر آئے۔ سنہ 2011ء میں یہ تعداد کم ہو کر 18 لاکھ ہو گئی تھی۔ سنہ 2012ء میں مزید کم ہو کر 16 لاکھ تک پہنچ گئی، تاہم 2013ء میں روسی سیاحوں کی تعداد میں پھر سے اضافہ دیکھنے میں آیا اور روسی سیاحوں کی مجموعی تعداد 24 لاکھ تک جا پہنچی۔ رواں سال توقع ہے کہ تعداد دو ملین آٹھ لاکھ تک پہنچ جائےگی۔

روس کے علاوہ مغربی ملکوں میں جرمنی، اٹلی، بیلجیئم، ہالینڈ، سوئٹزر لینڈ، برطانیہ اور امریکا سے بھی بڑی تعداد میں سیاح مصر کا رخ کرتے ہیں۔ مگر مصر میں پچھلے تین سال سے جاری سیاحوں بحرانوں کے باعث ان ملکوں کی طرف سے اپنے شہریوں کو مصر کے سفر سے گریز کی ہدایت کی گئی جس کے نتیجے میں ان ملکوں کےسیاحوں کی تعداد نہ ہونے کے برابر رہ گئی ہے۔