.

لاپتہ طیارے کا شعوری طور پر رخ موڑا گیا: وزیر اعظم ملائیشیا

طیارہ فوجی ریڈار میں آیا، جہاز کا مواصلاتی سسٹم بند کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ملائیشیا کے وزیر اعظم نجیب رزاق نے لاپتہ ملائییشین طیارے کے حوالے سے کہا ہے کہ'' پرواز ایم ایچ 370 کا کسی نے شعوری کوشش کے ساتھ رخ موڑا، جس کے نتیجے میں طیارہ ملائیشیا سے آگے مغرب کی طرف چلا گیا۔''

وزیر اعظم نے ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کے دوران کہا '' تحقیقات سے اس بات کی تصدیق ہوئی ہے کہ ایک ہفتہ قبل لاپتہ ہونے والے طیارے کو فوجی ریڈار نے دیکھا تھا، جس کا امکانی طور پر بعد ازاں ملائیشیا کے مشرقی ساحل پر پہنچنے سے پہلے مواصلاتی سسٹم بند کر دیا گیا۔''

انہوں نے کہا '' باوجودیکہ کہ میڈیا رپورٹس طیارے کے ہائی جیک ہونے کے حوالے سے آئی ہیں، لیکن میں چاہتا ہوں کہ واضح ہو جاوں ، اس لیے ہم ابھی تک تحقیقات کر رہے ہیں۔'' ان کا کہنا تھا '' تحقیقات میں ان تمام امکانات کا جائزہ لیا جا رہا ہے جن کی وجہ سے جہاز کو اپنا راستہ تبدیل کرنا پڑا۔''

فوجی ریڈار کے حوالے سے جمعہ کے روز انکشاف سامنے آیا ہے کہ طیارے کو ملائی جزیرہ نما سے جزائر انڈیمان کی طرف جاتے دیکھا گیا ۔ بھارتی حکام نے بھی ان جزائر میں تلاش شروع کر دی ہے۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق '' دو ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک غیر شناخت شدہ طیارہ جسے تحقیقات کرنے والے ماہرین ایم ایچ 370 قرار دیتے ہیں نیوی گیشن کے ذریعے ایک روٹ پر جا رہا تھا، اسے جب آخری مرتبہ فوجی ریڈار نے دیکھا تو اس سے ظاہر ہوتا تھا کہ اسے ایوی ایشن کی تربیت کا حامل کوئی شخص چلا رہا تھا۔''

بین الاقوامی سطح پر ریسکیو اور سرچ آپریشنز کا غیر معمولی تجربہ رکھنے والے ایک ماہر نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ آخری وقت پر جہاز کو چلانے والا '' ایک ماہر اور تجربہ کار پائلٹ تھا۔'' واضح رہے بھارت کے جزائر انڈیمان سے خلیج بنگال تک جزائر کا ایک وسیع سلسلہ ہے۔

ماہرین ایک اور امکان جسے نظر انداز نہیں کر رہے ہیں وہ طیارے میں ایندھن کا ختم ہو جانا ہے۔ تحقیقات سے متعلق ایک ذریعے کا کہنا ہے کہ'' ہو سکتا ہے طیارہ ایندھن نہ ہونے کی وجہ سے بحر ہند پر تباہ ہو گیا ہو۔''