لاپتہ طیارہ، گیارہ دن بعد تھائی ریڈار بھی بول پڑا

پہلے ریڈار ریکارڈ چیک نہ کیا تھا، تھائی حکام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

گیارہ دن پہلے لاپتہ ہونے والے ملائیشیا کے مسافر طیارے کے سلسلے میں آج بدھ کے روز تھائی لینڈ نے بھی اپنے ریڈارز کی مدد سے ایک نامعلوم طیارے کو مانیٹر کرنے کا دعوی کیا ہے۔ پرواز ایم ایچ 370 کی طرف سے چند ہی منٹ بعد پیغام منتقل کیا گیا لیکن تھائی حکام نے اپنے ملک کیلیے اس جہاز کو کوئی خطرہ نہ سمجھتے ہوئے اس بارے میں رپورٹ نہ کیا۔

تھائی حکام کے مطابق یہ معلومات طیارہ لاپتہ ہونے کے نو دن بعد ریڈار کی لاگ رپورٹ کی مدد سے ملائیشیا کی طرف سے ایک درخواست پر سامنے آئی ہیں۔ ریڈارز کے لاگ ریکارڈ کے مطابق '' ایک نامعلوم طیارہ تھائی وقت کے مطابق رات بارہ بج کر 28 منٹ پر ریڈار پر نمودار ہوا جبکہ چھ منٹ بعد یہ طیارہ جنوبی چینی سمندر کی طرف غائب ہو گیا ، جہاز کا رخ کوالالمپور کی طرف تھا۔

واضح رہے ایک اطلاع کے مطابق بوئنگ 777 کا آخری مرتبہ ایک بج کر 21 منٹ پر ملائیشین وقت کے مطابق ملائیشین کنٹرول سے رابطہ ہوا۔ لاپتہ طیارہ جس وقت ریڈار کے سامنے آیا یہ اپنی منزل کی مخالف سمت میں سفر کر رہا تھا۔ اس سے پہلے چین کے مواصلاتی سسٹم کے تحت جو آواز جہاز کی طرف سے سنی گئی وہ ایک بج کر 19 منٹ پر '' آل رائٹ ، گڈ نائٹ '' کی تھی۔

ملائیشیا ائیر لائنز کا کہنا ہے کہ یہ آواز کاک پٹ میں شریک پائلٹ کی تھی۔ تھائی ائیر فورس کے ترجمان ائیر مارشل مانتھن کے مطابق اس جہاز سے ایک آدھ مرتبہ پھر سگنل آئے، لیکن یہ واضح نہیں ہے کہ یہ ایم ایچ 370 تھا یا کوئی اور طیارہ تھا۔ ''

انہوں بعد میں آنے والے سگنلز کو متعین وقت دینے سے معذرت کی۔ مسافر طیارہ ملائیشیا کا اپنے سویلین ریڈار سے ایک بج کر تیس منٹ پر رابطہ ہوا اور دو بج کر 15 منٹ تک فوجی ریڈار سے رابطہ رہا۔

دوسری جانب تھائی حکام کا کہنا ہے کہ یہ طیارہ چونکہ تھائی لینڈ کی فضائی حدود سے باہر تھا اور نہ ہی اس سے تھائی لینڈ کو کوئی خطرہ تھا۔ اس لیے اس کا ریکارڈ چیک کرنے کی ضرورت نہ پیش آئی تھی۔

تھائی ترجمان نے اس امر کی تردید کی ہے کہ تھائی لینڈ نے یہ معلومات جان بوجھ کر روکے رکھی ہیں۔ خیال رہے اس وقت دنیا کے 26 ملک اس طیارے کی تلاش کیلیے کوشاں ہیں۔ لیکن ابھی تک کچھ کامیابی نہیں ہو سکی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں