.

لاپتہ ملائیشین طیارہ، تلاش تیسرے ہفتے میں داخل

ہفتے کے روز موسم بہتر، آسٹریلین طیارے تلاش کیلیے روانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لاپتہ ملائیشن طیارے کی تلاش آج سے تیسرے ہفتے میں داخل ہو گئی ہے، تاہم ابھی تک 239 افراد کو لے کر ملائیشین دارالحکومت سے اڑنے والے اس جہاز ایم ایچ 370 کا کوئی سراغ نہیں مل سکا ہے۔

حتی کہ جمعرات کو سیٹلائٹ کی مدد سے بحرہند پر جہاز کے ملبے کے دیکھے جانے کی آسٹریلیا کی جانب سے ملنے والی اطلاعات کے بعد بھی طیارے کی تلاش میں کو ئی پیش رفت نہیں ہو سکی ہے۔ آسٹریلیا کے نائب وزیر اعظم کا اس صورت حال پر یہ کہنا ہے کہ '' ہو سکتا ہے سیٹلائٹ کی مدد سے دیکھا جانے والا ملبہ اب گہرے پانیوں میں ڈوب گیا ہو۔''

نائب وزیر اعظم آسٹریلیا وارن ٹرس کا یہ بھی کہنا ہے کہ '' کافی دن پہلے جو چیز سطح سمندر پر نظر آئی تھی ہو سکتا ہے اب وہ تیر نہ رہی ہو، ممکن ہے یہ سمندر کی تہہ میں چلی گئی ہو۔'' واضح رہے آٹھ مارچ کو علی الصباح لاپتہ ہونے والے ایم ایچ 370 کی تلاش کیلیے ٹیمیں پرتھ سے 2500 کلومیٹر دور سمندر میں جنوب مغرب کی جانب اور جنگلی علاقے میں سرگرم ہیں۔

اس سے پہلے جمعہ کے روز پانچ جہازوں نے 23000 مربع کلومیٹر کے علاقے میں تلاش کی لیکن کہیں کوئی سراغ نہ مل سکا۔ آج ہفتے کے روز جب اس مسافر طیارے کی گمشدگی کا تیسرا ہفتہ شروع ہو گیا ہے چھ آسٹریلین جہاز تلاش کیلیے روانہ ہوئے ہیں ۔ جبکہ امکان ہے کہ چین اور جاپان بھی اس لثیر الملکی فضائی سرچ آپریشن میں شامل ہو جائیں گے ۔

اب تک موسم کی خرابی سے تلاش میں مشکل رہی ہے لیکن ماہرین کا خیال ہے کہ آج ہفتے کے روز موسم بھی بہتر رہے گا۔ ملائیشیا کے وزیر دفاع ہشام الدین حسین کے کہنا ہے کہ '' جہاز کی تلاش ایک طوالت اختیار کیے ہوئے ہے۔ '' انہوں نے ان دو درجن سے زائد ملکوں کا شکریہ ادا کیا جو سرچ آپریشن میں حصہ لے رہے ہیں یا مدد کر رہے ہیں۔