''قذافی کے حامیوں پر تیل کے عوض اسلحہ خریدنے کا الزام"

مقتول صدر کے گرفتار بیٹے الساعدی القذافی کے دوران تفتیش انکشافات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بدامنی کے شکار لیبیا کے ایک سیکیورٹی ذریعے نے بتایا ہے کہ مقتول لیڈر کرنل معمر قذافی کے زیر حراست فرزند الساعدی القذافی نے دوران تفتیش انکشاف کیا ہے کہ ملک میں غیر قانونی طور پر تیل چوری کرنے اور اسے فروخت کرنے میں قذافی کے حامی ملوث ہیں۔ ایسے عناصر تیل بیچ کر اسلحہ حاصل کر رہے ہیں۔

لیبیا کے سرکاری ٹیلی ویژن چینل سے گفتگو کرتے ہوئے سیکرٹری وزارت دفاع خالد الشریف نے کہا کہ دوران تفتیش الساعدی القذافی نے نہایت خطرناک اور حساس رازوں سے پردہ اٹھایا ہے۔ الساعدی نے اعتراف کیا ہے کہ ان کے مقتول والد کے حامی عناصر غیر قانونی طور پر تیل فروخت کر کے اسلحہ حاصل کرتے ہیں۔ تیل کی غیر قانونی خریدو فروخت میں اندرون اور بیرون ملک کرنل قذافی کے حامی ایک دوسرے کی معاونت کر رہے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں سیکرٹری دفاع خالد الشریف کا کہنا تھا کہ وہ الساعدی القذافی کے اقبالی بیانات کی آڈیو ٹیپ منظر عام پر لانے کے بارے میں غور کر رہے ہیں، جس میں ملزم نے نہایت خطرناک نوعیت کے انکشافات کیے ہیں۔ انہی اعترافات میں اس کا کہنا ہے کہ مقتول کرنل قذافی کے حامی غیر قانونی طریقے سے لیبیا سے تیل بیرون ملک منتقل کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پراسیکیوٹر جنرل کی جانب سے الساعدی کے اعترافات پر مبنی آڈیو ٹیپ ملزم کے خلاف مزید قانونی تقاضے پورے ہونے تک منظر عام پر نہ لانے کا کہا گیا ہے۔ جلد ہی قانونی تقاضے پورے ہونے کے بعد اسے قوم کے سامنے لایا جائے گا۔

خیال رہے کہ سنہ 2011ء میں لیبیا میں برپا ہونے والے انقلاب کے دوران قذافی خاندان کے بیشتر افراد ملک سے فرار ہو گئے تھے۔ فرار ہونے والوں میں کرنل معمر قذافی کے فرزند الساعدی القذافی بھی شامل تھے، جنہیں اس سال چھے مارچ کو پڑوسی ملک نیجر نے لیبیا کے حوالے کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں