قوم امریکی دشمنی کو برداشت نہیں کرے گی: شمالی کوریا

شمالی کوریائی رہنما کم جونگ ان کا عسکری قیادت سے صلاح مشورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان نے خبردار کیا ہے کہ امریکا کی طرف سے دشمنی کو ان کی قوم برداشت نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا ہے کہ شمالی کوریا اور جنوبی کوریا کے درمیان تازہ اختلاف کی لہر بھی امریکا کی وجہ سے ہے۔ کورین رہنما نے اس امر کا اظہار اعلی عسکری قیادت کے ساتھ تازہ صورت حال پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے کیا ہے۔

کوریئن رہنما نے الزام عاید کیا ہے کہ امریکا اور جنوبی کوریا امن کے درپے ہیں۔ انہوں نے اپنے سینئیر حکام کو خبردار کیا ہے کہ امریکا اور سیئول مشترکہ جنگی مشقوں سے شمالی کوریا کی مفاہمانہ کوششوں کا جواب دے رہے ہیں۔ ہم ان مشترکہ جنگی مشقوں کو مداخلت کی تیاری سمجھتے ہیں۔

کم جونگ ان نے مزید کہا امریکا اور اس طرح کی دوسری دشمن طاقتیں ہماری اچھائی کو نظر انداز کر رہی ہیں اور ہماری جمہوریہ کو نقصان پہنچانے کیلیے ، ہماری قوم کو تنہا کر دینے کیلیے اور معاشی طور پر تباہ کرنے کیلیے سازشیں کر رہی ہیں۔ تاہم ہماری افواج اور عوام امریکی دشمنی کو کبھی برداشت نہیں کریں گے۔ ایک عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق اس موقع پر حاضرین کی بڑی تعداد کوریئن شہریوں پر مشتمل تھی۔ تاہم ان کی گفتگو کے زیادہ جنگجویانہ الفاظ رپورٹ نہیں کیے گئے ہیں۔

واضح رہے صرف ایک ماہ قبل دونوں کوریاوں کے درمیان دو طرفہ تعلقات کے حوالے سے بہتری آئی تھی۔ ماہ فروری کے دوران ہی دونوں ملکوں نے اعلی ترین سطح پر مذاکرات بھی کیے ہیں۔ کوریئن جنگ کے تین سال بعد پہلی مرتبہ بچھڑی ہوئے کوریئن خاندان بھی باہم ملے ہیں۔ حتی کہ جب فروری میں جنوبی کوریا اور امریکا نے جنگی مشقیں شروع کیں تو بھی شمالی کوریا کا رد عمل سخت نہ تھا۔ لیکن یہ صورت حال جلد خراب ہو گئی۔

اسی دوران شمالی کوریا نے حالیہ ہفتوں میں میزائل تجربے کیے اور جاپان تک مار کرنے والے میزائلوں کا بھی کامیاب تجربہ کیا۔ پیر کے روز شمالی کوریا نے جنگی مشقوں کے دوران سمندری حدود میں لائیو اسلحہ اور بارود استعمال کیا۔ جن میں سے کچھ گولے جنوبی کوریا میں جا گرے ، جنوبی کوریا نے جواب دیا اور پھر دونوں جانب سے توپ خانے کا منہ کھول دیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں