چلی : شدید زلزلہ، سونامی کا خطرہ، خوف ہی خوف

نصف درجن ہلاک، بیسیوں زخمی، ساحلی علاقے خالی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چلی میں زور دار زلزلے سے ابتدائی اطلاعات کے مطابق نصف درجن کے قریب افراد ہلاک اور بیسیوں زخمی ہو گئے ہیں۔ امریکی جیالوجیکل سروے نے چلی میں آنے والے اس زلزلے کی شدت آٹھ اعشاریہ دو بتائی ہے اور اس زلزلے کا مرکز چلی کے شمال میں بتایا گیا ہے۔ واضح رہے چلی زلزلوں کی سرزمین سمجھا جاتا ہے تاہم پچھلے سال ماہ فروری میں آنے والے زلزلے کی شدت رچر سکیل پر آٹھ اعشاریہ آٹھ یعنی تازہ زلزلے سے بھی زیادہ تھی۔

چلی سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق اس زیادہ شدت کے زلزے سے سونامی کا خطرہ ہے۔ اس لیے ساحلی علاقوں کی شہری آبادیاں خالی کرا لی گئی ہیں۔ سونامی کی وارننگ کے بعد لاطینی امریکا اور بحر الکاہل کے ساحل سے منسلک ملکوں میں بھی الرٹ کر دیا گیا ہے، تاکہ امکانی سونامی سے کم سے کم جانی نقصان ہو۔

امریکی ادارے کے مطابق چلی کو متاثر کرنے والے زلزلے کا مرکز سمندر میں تقریبا دس کلومیٹر نیچے تھا۔ زلزلہ اس قدر شدید تھا کہ دارالحکومت سانتیاگو تک کی عمارتیں لرز اٹھیں اور لوگ خوفزدہ ہو کر گھروں سے باہر نکل آئے۔ واضح رہے زلزلے کا مرکز دارالحکومت سے تقریبا پونے پانچ سو کلو میٹر کے فاصلے پر تھا۔

فوری اطلاعات کے مطابق نقصان کا اندازہ نہیں لگایا جاسکا۔ دوسری جانب چلی کے ساحلی علاقوں خوف کی لہر ہے ۔ زلزلے کے صرف 45 منٹ بعد سمندری لہریں کئی میٹر کی اونچائی کو چھو رہی تھیں۔ یہ علاقے تیزی سے خالی ہو رہے ہیں۔ ٹی وی چینلز کے مطابق زلزلے سے چلی کی سڑکیں جگہ جگہ سے ٹوٹ گئی ہیں اور کئی جگہوں پر زمین اپنی جگہ سے ہل گئی ہے، اس لیے ٹریفک جام کے مناظر بھی عام ہیں۔ لوگ اپنے بچوں کو لے کر محفوظ مقامات کی تلاش میں سرگرداں ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں