.

بحرِ ہند میں لاپتا ملائشین طیارے کی زیرِ آب تلاش شروع

بلیک باکس کی بیڑی تین دن بعد ختم ہو جائے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

طیارے کو لاپتا ہوئے تین ہفتے سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن ابھی تک اس کا کوئی سراغ نہیں مل سکا۔

آسٹریلیا کے حکام کا کہنا ہے کہ ملائیشیا کے لاپتا طیارے ایم ایچ 370 کو ڈھونڈنے کے لیے دو بحری جہازوں نے جمعے کو جنوبی بحرِ ہند میں زیرِ آب تلاش شروع کر دی ہے۔

یہ بحری جہاز ایسے آلات سے لیس ہیں جو لاپتا طیارے کے بلیک بکس کے سگنل کو زیرِآب ڈھونڈ نکالنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

جمعہ کو گم شدہ طیارے کی تلاش میں 14 طیارے اور نو بحری جہاز حصہ لیں گے۔

یاد رہے کہ کوالالمپور سے بیجنگ جانے والا یہ مسافر بردار طیارہ آٹھ مارچ کو لاپتا ہو گیا تھا اس پر 239 افراد سوار تھے۔

ملائیشیا نے مختلف ممالک کے مصنوعی سیاروں سے ملنے والی تصاویر کی بنیاد پر کہا تھا کہ طیارے کی موجودگی کے آخری شواہد بحرِہند کے جنوبی علاقے میں پائے گئے تھے۔ لیکن ابھی تک اس طیارے کا ملبہ کہیں سے بھی نہیں ملا ہے۔ تلاش کی اس مہم کی سربراہی آسٹریلیا کر رہا ہے۔

لاپتا طیارے کی تلاش کا مرکز اس وقت پرتھ سے 1700 کلو میٹر کے فاصلے پر 217000 مربع کلو میٹر کا علاقہ ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے اس تلاش میں وقت کی بڑی اہمیت ہے کیونکہ بلیک باکس کی بیٹری سات اپریل تک ہی سگنل بھیج سکتی ہے جس کا مطلب ہے بلیک باکس سے چند دن تک ہی سگنل آئیں گے۔

اس طیارے کو گم ہوئے تین ہفتے سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن ابھی تک اس کا ایک بھی ٹکڑا نہیں مل سکا۔