کنٹر قوم پرست نریندر مودی شادی شدہ نکلے

بھارتی انتخاب کو 'کنواروں کی جنگ' کا نام دیا جا رہا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بھارت میں وزیر اعظم کے عہدے کے لیے مضبوط امیدوار نریندر مودی کے اپنے شادی شدہ ہونے کے اعتراف کے بعد ان کی نجی زندگی کا سب سے بڑا معمہ حل ہو گیا ہے۔ ترسٹھ سالہ مودی کو ہمیشہ سے کنوارا سمجھا جاتا تھا۔

ان کے بارے میں خیال تھا کہ وہ نوجوانی میں ہندو قوم پرست تنظیم میں نچلی سطح سے اٹھ کر اہم ترین رہنما بننے تک ہمیشہ اکیلے ہی رہے۔ بعض میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا تھا کہ مودی کے والدین نے بچپن میں ان کی شادی طے کر دی تھی لیکن انہوں نے نوجوانی میں اس شادی سے انکار کر دیا۔ تاہم مودی نے کبھی بھی ان اطلاعات کی تصدیق نہیں کی۔

مودی نے بدھ کو آئندہ الیکشن کے لیے کاغذات نامزدگی میں ایک حلف نامہ میں اعتراف کیا کہ ماضی میں ان کی ایک بیوی تھی۔ ریاست گجرات کے وزیر اعلٰی مودی نے حلف نامہ کے ایک کالم، جس میں امیدوار کو اپنی بیویوں کے نام بتانا ہوتا ہے، میں جاشو دابین تحریر کیا۔ تاہم حلف نامہ کے دوسرے حصوں میں انہوں نے بتایا کہ اب انہیں اس خاتون کا کوئی اتا پتا معلوم نہیں۔

رپورٹس میں مسلسل بتایا جاتا رہا ہے کہ 'مودی جاشو دابین نامی ایک باسٹھ سالہ سابق سکول ٹیچر سے رشتہ ازدواج میں بندھے رہے'۔ جاشو دابین نے فروری میں ایک انٹرویو کے دوران کہا تھا کہ انہیں مودی کی زندگی کا حصہ نہ رہنے کا افسوس نہیں۔

انتخابی جائزوں میں سبقت رکھنے والے کٹر ہندو قوم پرست مودی نے حال ہی میں ایک سوانح عمری میں بتایا تھا کہ وہ دراصل 'تنہائی سے لطف اندوز' ہوتے ہیں اور یہ کہ بچے نہ ہونے کی وجہ سے وہ ایک صاف شفاف سیاست دان ہیں۔ حال ہی میں ایک جلسے سے خطاب میں ان کا کہنا تھا 'میرا خاندان ہی نہیں تو میں کیوں بدعنوانی کے ذریعے فائدہ اٹھانے کی کوشش کروں گا'۔

نو مرحلوں میں پایہ تکمیل تک پہنچنے والے موجودہ بھارتی انتخابات کا جمعرات کو تیسرا مرحلہ شروع ہو چکا ہے۔ اس مرتبہ بھارت میں انتخاب کو ’کنواروں کی جنگ‘ قرار دیا جا رہا ہے کیونکہ مودی کے اہم ترین حریف اور 2004 سے اقتدار میں موجود حکمران جماعت کے رہنما راہول گاندھی بھی غیر شادی شدہ ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں