.

یورپی مبصرین، مصری صدارتی انتخاب مانیٹر کریں گے

مبصرین صرف قانونی سیاسی سرگرمیاں دیکھیں گے، مشترکہ اعلامیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یورپی یونین کے مبصرین اگلے سال ہونے والے صدارتی انتخاب کی مانیٹرنگ کے لیے مصر آئیں گے۔ یہ فیصلہ یورپی یونین کے خارجہ امور کی سربراہ کیتھرین آشٹن کے دورہ مصر کے موقع پر وزیر خارجہ نبیل فہمی کے ساتھ ملاقات میں کیا گیا ہے۔

ملاقات کے بعد اس سلسلے میں جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ ''فریقین نے یورپی مبصرین کے مشن کی مصر آمد پر اتفاق کیا ہے۔ یورپی یونین اس بارے میں مصر کی عبوری حکومت کی دعوت پر مبصرین بھیجی گی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ یورپی ذمہ دار نے اس حقیقت کا خیر مقدم کیا ہے کہ مبصرین کی آمد کیلیے ضروری معاہدات جلد مکمل کر لیے جائیں گے۔ ان معاہدات کے تحت یورپی مبصرین کو بلا روک ٹوک پورے مصر میں نقل و حرکت کرنے کے علاوہ ہر طرح کی قانونی سیاسی سرگرمیوں کو مانیٹر کرنے کی اجازت ہوگی۔

مشترکہ طور پر جاری کیے گئے بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ یورپی مشن انتخابی مانیٹرنگ کے دوران غیر جانبداری کے ساتھ اپنے مشاہدات پر مبنی رپورٹ مرتب کرے گی، نیز دونوں فریق ایک شفاف اور قابل اعتماد انتخاب کیلیے پُرامید ہیں۔ واضح رہے مصر مں صدارتی انتخاب اگلے ماہ 26 تاریخ کو متوقع ہیں، نئے صدر کیلیے ووٹنگ دو دن جاری رہے گی۔

مصر میں پہلے منتخب صدر محمد مرسی کی برطرفی کے دس ماہ بعد متوقع صدارتی انتخاب میں مرسی کا تختہ الٹنے والے فیلڈ مارشل عبدالفتاح السیسی اہم ترین امیدوار کے طور پر موجود ہیں۔ اس انتخاب سے پانچ ماہ پہلے ہی اخوان المسلمون کو ایک دہشت گرد تنظیم قرار دے کر اس کی سرگرمیوں پر پابندی لگائی جا چکی ہے۔

اخوان المسلمون کے ایک قریبی ذریعے کا کہنا ہے کہ کیتھرین آشٹن نے اپنے دورے کے موقع پر اخوان کے کسی رہنما سے ملنے کی خواہش ظاہر نہیں کی ہے۔ اس سے پہلے پچھلے سال مصر آمد کے موقع پر کیتھرین آشٹن نے زیر حراست معزول صدر مرسی سے نامعلوم مقام پر ملاقات بھی کی تھی۔