.

مصری اخوان نے اقتدار بچپنے سے کھو دیا: راشد الغنوشی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اخوان المسلمون کی صفوں میں موجود اختلافات اب بند کمروں کے اجلاس سے نکل کر میڈیا کہ شہ سرخیوں کا موضوع بننے لگے ہیں۔

ترکی کے ثقافتی صدر مقام استنبول میں اخوان المسلمون کی عالمی تنظیم کی قیادت کے حالیہ اجلاس میں پیدا ہونے والے اختلافات اس وقت سامنے آئے جب تیونس کی حکمران جماعت کے سربراہ راشد الغنوشی نے ترک وزیر اعظم رجب طیب ایردوآن کی جانب سے ان کے تبصرے سے صرف نظر کی کوشش کی۔

یاد رہے کہ راشد الغنوشی نے اجلاس میں مصر کی اخوان المسلمون پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اپنی 'بچگانہ حرکتوں سے ایک اہم عرب ملک میں اقتدار کھو دیا۔'

تیونس کی اہم اسلام پسند جماعت 'النہضہ' کے رہنما کا یہ تبصرہ ترک وزیر اعظم نے گول مول کرنے کی کوشش کی جس پر مسٹر الغنوشی نے ناراضی کا اظہار کیا۔ اس تبصرے کو اجلاس کے دس دن بعد تقسیم ہونے والی کارروائی میں شامل کیا گیا۔ راشد الغنونشی کا کہنا تھا کہ اخوان المسلمون کی بین الاقوامی تنظیم کی جانب سے اجلاس میں میرے اظہار خیال کو چھپانا قابل مذمت ہے۔