.

یمن: صنعا میں مسلح افراد کی فائرنگ سے فرانسیسی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے دارالحکومت صنعا میں مسلح افراد نے فائرنگ کرکے ایک فرانسیسی شہری کو ہلاک کردیا ہے۔

صنعا سے العربیہ کے نمائندے نے سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ حملہ آور ایک کار میں سوار تھے اور انھوں نے ہدیٰ کے علاقے میں مقتول کی کار پر فائرنگ کی تھی۔اس علاقے میں غیرملکی سفارتی مشن واقع ہیں۔

برطانوی خبررساں ادارے رائیٹرز نے یمنی سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ حملہ آور ایک بغیر لائسنس کار میں سوار تھے۔انھوں نے فرانسیسی شخص کی کار کو روکا اور اس پر فائرنگ کردی۔مقتول کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ وہ فرانسیسی سفارت خانے میں محافظ کے طور پر تعینات تھا۔

فوری طور پر کسی یمنی گروپ نے اس حملے کی ذمے داری قبول نہیں کی۔ادھر پیرس میں فرانسیسی وزارت خارجہ کے حکام نے واقعہ کی تصدیق نہیں کی ہے۔گذشتہ ماہ مسلح افراد نے اسی انداز میں ایک جرمن سفارت کار پر حملہ کیا تھااور ان کی فائرنگ سے وہ زخمی ہوگیا تھا۔ان حملہ آوروں نے اس سفارت کار کو اغوا کرنے کی کوشش کی تھی۔

واضح رہے کہ یمن کی مرکزی حکومت 2012ء میں سابق مطلق العنان صدر علی عبداللہ صالح کی عوامی بغاوت کے نتیجے میں رخصتی کے بعد سے ملک میں قیام امن کے لیے کوشاں ہے۔ملک کے جنوب مشرقی اور وسطی صوبوں میں شورش پسند قبائلیوں ،جنوب میں القاعدہ کے جنگجوؤں اور شمال میں حوثی شیعہ باغیوں نے علم بغاوت بلند کررکھا ہے۔

یمن سب سے خطرناک جنگجو تنظیم''جزیرہ نماعرب میں القاعدہ''کا گڑھ ہے اور یمنی فوج نے گذشتہ ماہ دو جنوبی صوبوں شیبوۃ اور ابین کے چھوٹے قصبوں اور دیہات میں القاعدہ کے بچے کچھے جنگجوؤں کے خلاف ایک بڑی کارروائی شروع کی تھی۔یمنی فوج نے اب تک القاعدہ کے بیسیوں جنگجوؤں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔