لیبیا میں اغوا اردنی سفیر رہا ہو گئے

وزارت خارجہ نے 'العربیہ' کو رہائی ڈیل کی تصدیق کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبی وزارت خارجہ کے ذرائع نے گذشتہ ماہ طرابلس سے اغوا ہونے والے اردنی سفیر کی رہائی کی تصدیق کر دی ہے۔ ذرائع نے 'العربیہ' کو بتایا کہ لیبیا میں اردنی سفیر فواز العیطان کو اغوا کے بعد دارلحکومت طرابلس سے بنغازی منتقل کر دیا گیا تھا۔

انتہائی باخبر ذرائع کا کہنا ہے اردنی سفیر کی رہائی اردن میں دہشت گردی کی پاداش میں عمر قید کاٹنے والے دو لیبی شہریوں کی رہائی کے بعد عمل میں آئی۔ ذرائع کے مطابق جو خصوصی طیارہ اردن سے رہائی پانے والے لیبی شہریوں محمد سعید الدرسی کو لیکر بنغازی اترا، اسی کے ذریعے رہائی پانے والے اردنی سفیر فواز العیطان کو عمان روانہ کیا گیا۔

ذرائع کے مطابق اردنی سفیر کی رہائی میں ایک عربی رابطہ کار نے مدد کی اور یہی شخصیت اردنی حکومت اور لیبیا کے شہر بنغازی میں مسلح سیکیورٹی ملیشیا کے سربراہ وسام بن حمید سے معاملات طے کرنے میں پیش پیش رہی۔

یاد رہے اردنی سفیر فواز العیطان کو اپریل کے وسط میں مسلح افراد نے ایک حملے کے بعد اغوا کر لیا تھا۔ اس کارروائی میں ان کا ڈرائیور زخمی ہو گیا تھا۔ سنہ 2011ء میں معمر القذافی کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے لیبیا بدامنی کی لپیٹ میں ہے اور اردنی سفیر پر حملہ قذافی دور کے بعد اس ملک میں سفارتکاروں کو نشانہ بنانے کی دوسری کوشش تھی۔

تاہم یہ بات واضح نہیں ہو سکی کہ اردنی سفیر کو کن لوگوں نے اغوا کیا تھا تاہم لیبی ذرائع نے کہا تھا کہ فواز العیطان کے اغوا کا تعلق لیبی کے سرکردہ جہادی محمد الدرسی کی اردن میں عمر قید سے ہو سکتا ہے، جو سات برسوں سے اردن میں قید ہیں۔

فواز العیطان کے اغوا کے تین ہفتوں بعد لیبی حکومت نے اس امر کی تصدیق کر دی تھی کہ اردن کے ساتھ قیدیوں کے تبادلے کا معاہدہ طے پا گیا ہے، تاہم طرابلس حکومت نے اس معاہدے کی مزید کوئی تفصیل نہیں بتائی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں