.

مراکشی خاتون وزیر کے ہاں پہلے بچے کی ولادت

مبارکہ بوعیدہ نے وزارت بچانے کے لیے پورا عرصہ حمل پوشیدہ رکھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مراکش کی حکومت میں شامل ایک اہم خاتون وزیر مبارک بوعیدہ وزارت کی ذمہ داریاں نبھاتے ہوئے پہلے بچے کی ماں بھی بن گئی ہیں۔ مراکشی حکومت کی تاریخ میں یہ پہلا اور منفرد واقعہ ہے جس میں خاتون وزیر نے اپنا حمل خفیہ رکھا اور زچگی سے ایک روز قبل بھی وہ کابینہ کے اجلاس میں حاضر رہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مبارکہ بوعیدہ کو گذشتہ برس اکتوبر میں اسلام پسند وزیر اعظم عبدالالہ بن کیران کی حکومت میں وزیر مملکت برائے خارجہ امور کا قلم دان سونپا گیا تھا۔ بوعیدہ کا اپنا خاندانی پس منظر صحارا کے قبائل سے ہے لیکن اس نے اپنے ظاہری حلیے میں کبھی بھی خود کو قبائلی گیٹ اپ میں نہیں رکھا۔

ذرائع کے مطابق 39 سالہ مبارکہ بوعیدہ نے گذشتہ جمعہ کو رباط کےایک اسپتال میں پہلے بچے کو جنم دیا۔ زچہ و بچہ دونوں اسپتال میں ہیں اور بہ خیریت ہیں۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ مبارکہ نے نہایت غیر محسوس انداز میں اپنے پیشہ وارانہ فرائض کی انجام دہی بھی جاری رکھی۔ وہ گذشتہ جمعرات کو کابینہ کے اجلاس میں شریک تھیں تاہم جمعہ کے اجلاس میں وزیر خارجہ صلاح الدین مزوار نے مژدہ سنایا کہ مبارکہ بوعیدہ آج اجلاس میں موجود نہیں کیونکہ وہ ایک عدد بچے کی ماں بن چکی ہیں اور اس وقت اسپتال میں ہیں۔ اس اچانک خبر پر دیگر وزراء بھی حیران رہ گئے۔

حمل پوشیدہ رکھنے کا راز

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مبارکہ بوعیدہ ایک مضبوط اعصاب کی خاتون واقع ہوئی ہیں۔ انہوں نے ایک طرف اپنی پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کی انجام دہی میں کوئی کسر نہیں چھوڑی لیکن اس کے ساتھ ساتھ اُنہوں نے اپنا حمل بھی ظاہر نہیں ہونے دیا۔

اندرون ملک ہی نہیں بلکہ وہ کئی ملکوں کے دورے بھی کرتی رہیں لیکن کسی کیمرہ مین کے کیمرے کی آنکھ مبارکہ کے حمل کی نشاندہی نہیں کر سکی۔ اس کی بنیادی وجہ یہ رہی کہ مبارکہ نے کبھی بھی اپنی واضح تصویر بنانے کا کسی کو موقع ہی نہیں دیا۔ فوٹو گرافر جب بھی اس کی تصویریں بناتے تو وہ اس انداز میں کھڑی ہوتی کہ اس کے حمل کی کوئی نشانی ظاہر نہ ہو سکے۔

چونکہ مبارک بوعیدہ کا اپنا خاندانی پس منظر صحرائی علاقے سے ہے لیکن انہوں نے کبھی بھی صحرائی برقع نہیں پہنا بلکہ ہلکے پھلکے لباس میں دکھائی دیتی رہی ہیں۔ اس کے باوجود حمل کا اندازہ نہ ہو پانا حیران کن ہے۔ مراکش میں صحرائی خواتین عموما بد نظری اور حسد سے بچنے کے لیے اپنے حمل کو خفیہ ہی رکھتی ہیں۔

وزارت کی ذمہ داریوں کی انجام دہی کے دوران مبارکہ بوعیدہ کوئی پہلی خاتون نہیں جس نے بچے کو جنم دیا ہو بلکہ اس سے قبل پاکستان کی سابق وزیر اعظم نے نظیر بھٹو، فرانس اسپین کی خواتین وزراء بھی ایسے تجربات سے گذر چکی ہیں۔ اسپانوی کارمی چکون وزارت دفاع جیسے اہم عہدے پر فائز تھیں جن کے ہاں بچے کی پیدائش ہوئی۔ انہوں نے بھی اپنا حمل خفیہ رکھا۔ ان کی خواہش تھی کہ وہ افغانستان کا دورہ کریں اور وہاں پر متعین میں اسپانوی فوجیوں سے ملاقات اور ایک فوجی پریڈ میں حصہ لے سکیں، تاہم وہ ایسا نہیں کر سکیں کیونکہ نیا مہمان پہلے آ گیا تھا۔

ایسا ہی واقعہ سابق فرانسیسی وزیر انصاف رشیدہ ڈاٹی کا بھی ہے۔ مسز رشیدہ سابق فرانسیسی صدر نیکولا سارکوزی کی کابینہ میں شامل تھی اور اس نے بھی اپنا حمل پوشیدہ رکھا۔ دراصل وہ اپنے بطن میں موجود بچے کے والد کی شناخت ظاہر نہیں کرنا چاہتی تھیں۔