.

ترک مشیر نے احتجاجی شخص کی ٹھڈوں سے تواضع کردی

کان کے حادثے اور ٹھڈے مارنے کے واقعہ پر ایردوان حکومت کو تنقید کا سامنا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک وزیراعظم رجب طیب ایردوان کے ایک مشیر نے مغربی شہر سوما میں کان کے حادثے پر احتجاج کرنے والے ایک شخص کو سرعام ٹھڈے مارے ہیں۔اس واقعہ کی ویڈیو منظرعام پر آنے کے بعد شہریوں اور میڈیا نے سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے۔

ترک اخبارات نے جمعرات کو وزیراعظم ایردوان کے اس مشیر کے مظاہرہ کرنے والے ایک شخص کو ٹھڈے مارتے ہوئے تصاویر شائع کی ہیں۔ان تصاویر میں وہ شخص زمین پر گرا ہوا ہے اور اس کو خصوصی پولیس فورس کے اہلکاروں نے پکڑا ہوا ہے جبکہ مشیر صاحب اس کی ٹھڈوں سے تواضع کررہے ہیں۔

یہ واقعہ بدھ کو وزیراعظم رجب طیب ایردوآن کے مغربی شہر سوما میں کان کے حادثے کے بعد دورے کے موقع پر پیش آیا تھا۔اس واقعے میں دوسو بیاسی کان کن ہلاک ہو چکے ہیں اور بیسیوں ابھی تک لاپتا ہیں۔

وزیراعظم کے دفتر نے سوما میں احتجاجی شخص کو ٹھڈے مارے جانے کے اس واقعہ سے لاتعلقی کا اظہار کیا ہے۔ایک عہدے دار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا ہے کہ یہ ان مشیر صاحب کا ذاتی فعل ہے اور وہی اس کے ذمے دار ہیں لیکن اس واقعہ سے میڈیا اور ترکوں میں رجب طیب ایردوان کا تشخص ضرور مجروح ہوا ہے جو مستقبل قریب میں ترکی کی صدارت پر متمکن ہونا چاہتے ہیں۔کان کے افسوسناک حادثے اور اس واقعہ پر میڈیا نے ترک حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔