ترکی کان حادثہ، کان کے مالکان اور افسر گرفتار

اب تک کل 34 افراد حراست میں لیے گئے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ترکی کی ایک عدالت نے کوئلے کی کانوں میں تین سو ایک ہلاکتوں کے سلسلے میں آٹھ مشتبہ افراد کو عبوری الزام کے تحت گرفتار کر لیا ہے۔ کوئلے کی کان میں یہ ہولناک واقعہ پچھلے ہفتے مغربی قصبے سوما کے قریب پیش آیا تھا اور کان کے ان اعلی ذمہ دار ان آٹھ مشتبہ افراد کی گرفتاری اس واقعے کے بعد عمل میں آئی تھی ۔

سوما کوئلہ مائننگ کمپنی کے جنرل مینیجر رمضان ڈوکرو، چیف ایگزیکٹوکان گرکان، اور کمپنی کے مالک کے بیٹے الف گرکان ان زیر حراست لیے گئے افراد میں شامل ہیں۔ ان گرفتاریوں کے علاوہ بھی 26 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔

واضح رہے ابتدائی طور تحقیقات کے نتیجے میں سامنے آنے والے حقائق کے مطابق کان میں آگ بھڑکنے کی وجہ کوئلے کی حرارت کو ہوا ملنا بنا ہے۔ یہ حادثہ ترکی تاریخ میں کسی کان میں ہونے والا بدترین حادثہ تھا۔ اس سے پہلے 1992 میں ہونے والے ایک حادثے میں263 لوگ مارے گئے تھے۔

تازہ واقعے کے بعد ملک بھر میں سخت احتجاج بھی سامنے آیا ہے۔ احتجاج کرنے والوں کا موقف ہے کہ کان کے مالکان اور انتظامیہ نے کان کنوں کے تحفظ کیلیے ضروری انتظامات نہیں کیے تھے۔ جبکہ اس صنعت کے مالکان وزیر اعظم کے بہت قریب سمجھے جاتے یں

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں