.

مہمان کی کال کاٹنے پر مصری نیوز اینکر ملازمت سے فارغ

ایتھوپیئن سفیر سے تلخ کلامی کے بعد رانیا نے فون کاٹ دیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں متعین ایتھوپیا کے سفیر کے ساتھ ٹی وی پروگرام میں تلخ کلامی پر 'التحریر' ٹی وی کی ایک نیوز اینکر کو نوکری سے نکال دیا گیا ہے۔

مصر کے"التحریر" ٹیلی ویژن چینل کے ایک ذریعے نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ خاتون اینکر رانیا بدوی اور ایتھوپیائی سفیر محمود دردیر کے درمیان ایک ٹی وی خبرنامے میں ٹیلیفونک مکالمے کے دوران تلخی کلامی ہوئی۔ اس پر اینکر نے غیر پیشہ ورانہ رد عمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے سفیر کی فون کال کاٹ دی جس پر انہوں نے مصری وزارت خارجہ کو اس کی شکایت کی تھی۔ وزارت خارجہ کی ہدایت پر بعد ٹی وی انتظامیہ نے رانیا کو نکال دیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اینکر رانیا بدوی کو ٹی وی کے فیصلے سے آگاہ کرتے ہوئے ان سے کہا گیا ہے کہ پیشہ ورانہ فرائض کی انجام دہی میں غفلت برتنے پر اس کے ساتھ ٹی وی کا معاہدہ منسوخ کر دیا گیا ہے۔ اس نے ایک دوست ملک کے معزز سفیر کے ساتھ گفتگو میں نامناسب طرز عمل اختیار کیا،جس پر ٹی وی انتظامیہ کو بحران اور شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ رانیا البدوی کی جگہ اب عارضی طور پر پروگرام "ساتواں صدر" کی میزبان ریھام السھیلی کو ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں۔ تاہم ٹی وی انتظامیہ نے رانیا کے ساتھ معاہدہ ختم کرنے سے متعلق کسی اندرونی یا بیرونی دباؤ کی نفی کی ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ بدھ کو ٹی وی خبروں کے دوران ایتھوپین سفیر محمود دردیر کو ٹیلیفون پر گفتگو کے لیے دعوت دے رکھی تھی۔ نیوز کاسٹر رانیا نے ایتھوپیئن سفیر سے گفتگو کرتے ہوئے ان کے ملک میں جاری بیداری کی تحریک پر بات کی۔ معاملہ اس وقت بگڑا جب رانیا نے کہا کہ "آپ اپنی حدود سے تجاوز کر رہےہیں"۔

اس پر سفیر نے جواب دیا کہ "آپ بیداری کی تحریک دبانے کا مفہوم نہیں سمجھتیں"۔ دونوں میں مزید تلخ کلامی ہوئی۔ نیوز اینکر نے کہا کہ آپ سفارتی آداب اور قرینوں سے ناواقف ہیں۔ یہ کہہ کر اس نے ٹیلیفون بند کر دیا۔ بعد ازاں ایتھوپیئن سفیر نے مصری وزارت خارجہ میں اس کی شکایت کی جس پر رانیا کو نوکری سے ہاتھ دھونا پڑے۔