شاہ عبداللہ کی عراقیوں کے لیے 50 کروڑ ڈالرز کی امداد

تشدد سے متاثرہ عراقیوں میں مذہب اور نسل سے بالاتر ہوکر امداد تقسیم کی جائے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز نے تشدد سے متاثرہ عراقیوں کے لیے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر پچاس کروڑ ڈالرز کی امداد جاری کرنے کا حکم دیا ہے۔

سعودی عرب کی وزارت خارجہ کے ایک عہدے دار نے سرکاری خبررساں ایجنسی ایس پی اے کو بتایا ہے کہ یہ رقم اقوام متحدہ کے ذریعے تشدد سے متاثرہ ضرورت مند اور بے گھر ہونے والے عراقیوں میں نسل ،مذہب ،عقیدے یا فرقے سے بالاتر ہوکر تقسیم کی جائے۔

اس عہدے دار نے مزید بتایا ہے کہ ''اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بین کی مون کو اس امدادی رقم کے بارے میں مطلع کردیا گیا ہے۔یہ رقم صرف عراقی عوام کے لیے ہے اور اقوام متحدہ کے تحت اداروں کے ذریعے تقسیم کی جائے گی۔سعودی مملکت متاثرہ برادر عراقی عوام کے تمام طبقات تک اس امداد کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے کوششیں جاری رکھے گی''۔

اقوام متحدہ کے تخمینے کے مطابق عراق کے مختلف علاقوں میں اس سال اب تک تشدد کے واقعات کی وجہ سے قریباً بارہ لاکھ افراد بے گھر ہوئے ہیں۔عراق کے شمالی صوبوں میں گذشتہ تین ہفتوں کے دوران القاعدہ کی ہم نوا جنگجو تنظیم دولت اسلامی عراق وشام (داعش) کی وزیراعظم نوری المالکی کی حکومت کے خلاف مسلح بغاوت کے نتیجے میں ہزاروں افراد بے گھر ہوگئے ہیں اور وہ داعش اور عراقی فوج کے درمیان جاری لڑائی میں جانیں بچانے کے لیے اپنا گھربار چھوڑ کر محفوظ مقامات کی جانب جارہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں