القاعدہ نے سعودی چوکی پر حملے کی ذمے داری قبول کر لی

یمنی سرحد کے ساتھ واقع چوکی پر حملہ کرنے والے جنگجوؤں کی تصاویر جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جزیرہ نما عرب میں القاعدہ نے سعودی عرب کی یمن کی سرحد کے ساتھ واقع چوکی پر حملے کی ذمے داری قبول کر لی ہے اور اس حملے میں حصہ لینے والے جنگجوؤں کی تصاویر جاری کی ہیں۔

یہ تصاویر ایک ویڈیو سے بنائی گئی ہیں۔ان میں بعض جنگجوؤں کے چہرے نظر آرہے ہیں اور وہ سعودی عرب اور یمن کے درمیان واقع ایک بارڈر کراسنگ کی جانب گراڈ میزائل فائر کررہے ہیں۔ایک تصویر میں ایک یمنی جنگجو کمانڈر کسی صحرائی علاقے میں دوسرے جنگجوؤں کو تربیت دے رہا ہے۔

ایک تصویر میں ہفتے کے روز سعودی عرب کی ایک سکیورٹی عمارت میں خود کو دھماکے سے اڑانے والا جنگجو اپنی کلاشنکوف لیے مسکراتا ہوا نظر آرہا ہے۔اس کا نام ایوب السؤید بتایا گیا ہے۔اس کی عمر بائیس سال تھی۔اس کا نام گذشتہ دوسال سے سعودی عرب کی وزارت داخلہ کو انتہائی مطلوب کی فہرست شامل تھا۔

القاعدہ کے چھے مسلح جنگجوؤں نے جمعہ کی شب سعودی عرب اور یمن کے درمیان سرحد پر واقع ایک چوکی پر حملہ کیا تھا جس کے بعد ان کی سعودی بارڈر سکیورٹی فورس کے ساتھ جھڑپ ہوئی تھی جس میں تین حملہ آور مارے گئے تھے۔

االقاعدہ کے جنگجوؤں کے حملے میں ایک یمنی فوجی اور سعودی سکیورٹی فورسز کے ایک افسر سمیت چار اہلکار جاں بحق ہوگئے تھے۔سعودی فورسز نے ایک جنگجو کو زخمی حالت میں گرفتار کر لیا تھا اور دو ایک سکیورٹی عمارت میں جا چھپے تھے جہاں انھوں نے ہفتے کے روز خود کو دھماکوں سے اڑا دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں