.

امریکا اور اسرائیل چورسپاہی کا کھیل ،کھیل رہے ہیں

دشمن ایران پرحملے کی جرأت نہیں کر سکتا: آیت اللہ علی خامنہ ای

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے سپریم لیڈرآیت اللہ علی خامنہ ای نے اپنے ملک کے بارے میں امریکا اور اسرائیل کی پالیسیوں پر سخت نکتہ چینی کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکا اور اسرائیل دو کھلاڑی ہیں جو ایران کے خلاف (سازش کا) کھیل کھیل رہے ہیں۔ اس سازشی کھیل میں امریکا کا کردار "شریف" پولیس اہلکار جبکہ اسرائیل کا 'بدمعاش اور شریر' اہلکار کی مانند ہے۔ یہ دونوں ملک عرب ممالک سے مل کر ایران کو جوہری پروگرام سے دستبردار کرنا چاہتے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں اداروں کے مطابق تہران میں افطار ڈنر سے خطاب کرتے ہوئے سپریم لیڈر خامنہ ای نے کہا کہ "آپ دونوں ملکوں (امریکا، اسرائیل)کا کردار ملاحظہ کیجیے۔ دونوں ایران کے خلاف ایک کھیل کھیل رہے ہیں۔ اس کھیل میں امریکا اچھے اور اسرائیل برے پولیس اہلکاروں کے روپ میں ہیں۔ دھمکیوں سے ایسے لگتا ہے کہ اسرائیل ابھی ایران پرحملہ کرنے والا ہے جبکہ امریکا، اسرائیل کو ایسا کرنے سے منع کر رہا ہے، لیکن در پردہ دونوں ایک چال چل رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ امریکا اور اسرائیل دونوں ایران پرحملے کی جرات نہیں کر سکتے کیونکہ دشمن کو اندازہ ہے کہ ایران پر حملہ کتنا مہنگا پڑ سکتا ہے۔ اس کے پاس گیدڑ بھبکیوں اور اقتصادی پابندیوں کے سوا کوئی راستہ نہیں ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ برس کے آخرمیں چھ عالمی طاقتوں اور ایران کےدرمیان تہران کے متنازعہ جوہری پروگرام پر معاہدے کو اسرائیل نے تسلیم نہیں کیا ہے۔ اسرائیل کا اصرار ہے کہ ایران ایٹم بم تیار کر رہا ہے اور اس نے عالمی طاقتوں کو مذاکرات کا جھانسہ دے کر اپنے مقصد کی تکمیل کے لیے وقت حاصل کرنے میں کامیابی حاصل کر لی ہے۔

اسرائیل کئی مرتبہ ایران پر براہ راست حملے کی دھمکی اور امریکا سے بھی فوجی کارروائی کا مطالبہ کرچکا ہے تاہم جوہری تنازع پر مذاکرات کے بعد امریکا نے اسرائیلی مطالبات کو کوئی اہمیت نہیں دی۔ مذاکرات شروع ہونے کے بعد مغرب نے ایران پراقتصادی پابندیاں بھی نرم کر دی ہیں۔