.

کابل ائیر پورٹ، خود کش دھماکہ تین غیر ملکی مشیر ہلاک

پانچ دنوں کے دوران ائیر پورٹ کو دوسری بار نشانہ بنایا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان کے دارالحکومت کابل کا بین الاقوامی ائیر پورٹ پانچویں دن ایک مرتبہ پھر طالبان کے حملے کی زد میں آیا ہے ۔ منگل کے روز طالبان نے ایک خود کش حملے کے دوران کم از کم تین غیرملکی حکومتی مشیروں کو ہلاک کر دیا ہے۔

دوسری جانب طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے دعوی کیا ہے کہ اس کارروائی کے دوران 15 افراد کو ہلاک کیا گیا ہے۔ طالبان ترجمان کے اس دعوے کی سرکاری طور پر تصدیق نہیں کی گئی ہے۔ واضح رہے افغان حکومت کے غیر ملکی مشیروں کے ساتھ ان کا مقامی مترجم بھی مارا گیا ہے۔

کابل ائیر پورٹ کے باہر ہونے والے اس خود کش حملے میں مارے گئے تین غیر ملکی مشیران کے حوالے سے فوری طور پر یہ نہیں بتایا گیا ہے کہ ان کا کس ملک سے تعلق ہے اور یہ کس قسم کی مشاورت دینے افغانستان آئے تھے۔

اس سے پہلے 17 جولائی کو ایک حملے کا نشانہ بھی کابل کا یہی ائیر پورٹ بنا تھا۔ طالبان نے ائیر پورٹ کے نزدیک ایک مکان سے ائیر پورٹ کو نشانہ بنایا تھا۔ تاہم اس کارروائی میں ملوث تمام پانچ حملہ آور ہلاک ہو گئے تھے۔ کاابل ائیر پورٹ نیٹو فورسز کے فوجی استعمال میں بھی ہے۔

واضح رہے رواں سال کے اواخر تک امریکی افواج افغانستان سے واپس جا رہی ہیں۔ جس کے بعد طالبان اور افغان فورسز ایک دوسرے کے براہ راست مقابل ہوں گے۔