واشنگٹن کا امریکی اخبار کے نمائندے کی فوری رہائی کا مطالبہ

امریکا نے سفارتی مدد فراہم کرنے کے لئے سوئس حکام سے رابطہ کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا نے گذشتہ ہفتے حراست میں لئے گئے واشنگٹن پوسٹ کے رپورٹر، ان کی اہلیہ اور دو فری لانس صحافیوں کو فوری رہا کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

تہران کے چیف جسٹس غلام حسین اسماعیلی نے جمعہ کے روز تہران میں واشنگٹن پوسٹ کے نمائندے سالہ جیسن رازین اور ان کی اہلیہ یگانہ صالحی کو حراست میں لینے کی تصدیق کی تھی۔

امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان جین ساکی نے ایک بیان میں مسٹر رازین سمیت تین دیگر امریکی شہریوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے بتایا کہ ان کا ملک ساری صورتحال کا بغور جائزہ لے رہا ہے۔

واشنگٹن پوسٹ کے مطابق رازین سنہ 2012ء سے تہران میں اخبار کے نامہ نگار کے طور پر فرائض سرانجام دے رہے ہیں اور وہ بیک وقت امریکی اور ایرانی شہریت کے حامل ہیں۔

اخبار کے مطابق رازین کی اہلیہ ایرانی شہری ہیں اور انہوں نے امریکا میں مستقل رہائش کے لئے درخواست جمع کروا رکھی ہے۔ اس کے علاوہ یگانہ متحدہ عرب امارات کے ایک اخبار کی نمائندہ کے طور پر فرائض سرانجام دے رہی ہیں۔

واشنگٹن اور تہران کے درمیان سفارتی روابط نہیں اسی لئے جین ساکی کے مطابق امریکا سوئس سفارتخانے کے ذریعے سے اس معاملے کو حل کرنے کی کوشش کر رہا ہے اور رازین کو قونصلر سروسز فراہم کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

یاد رہے تہران کے ساتھ کشیدہ تعلقات کی وجہ سے امریکا، سوئس حکام کی وساطت سے ایسے معاملات حل کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں