.

"انتہا پسند تنظیمیں عالمی خفیہ اداروں کی پیداوار ہیں"

سعودی مفتی اعظم کا ریاض کی جامع مسجد میں خطاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے مفتی اعظم عبد العزیز آل الشیخ نے کہا ہے کہ اسلام کی داعی انتہا پسند جماعتیں بین الاقوامی خفیہ ایجنسیوں کی پیداوار ہیں ان کا مقصد زمین میں فساد پھیلانا ہے۔

کثیر الاشاعت پین عرب اخبار 'الشرق الاوسط' نے ریاض کی جامع الامام ترکی بن عبدالعزیز میں مفتی اعظم کے خطاب کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ "کسی مومن کا دوسرے مومن کو جان بوجھ کر قتل کرنا قطعاً جائز نہیں۔" انہوں نے کہا کہ درست ایمان کا تقاضہ ہے کہ مسلمانوں کی زندگیوں کا احترام کیا جائے، قتل کرنا کمال ایمان کی ضد اور کمی کی دلیل ہے۔

علماء کی سپریم کونسل کے سربراہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ آج قتل مقاتلے کی انتہائی قابل نفرت صورتیں ہمارے سامنے آ رہی ہیں۔ یہ اقدامات اسلام دشمنی کا پہلا مرحلہ ہیں۔ ان جرائم کا پرچار میڈیا پر دیکھنے میں آتا ہے، جسے دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ مسلمان دوسرے مسلمانوں کو کیسے قتل کرتا ہے۔ ایسے قتل کے مرتکب افراد کے ڈانڈے بین الاقوامی خفیہ ایجنسیوں سے ملتے ہیں۔ یہی مسلمانوں کا خون بہانے کے درپے ہیں اور یہی بڑے بڑے جرائم کا ارتکاب کر رہے ہیں۔ اسلامی شریعت کا ان معاملات سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ تمام مسلمانوں کو انہیں مسترد کرنے کا حق حاصل ہے۔"

مفتی دیار مملکت نے کہا کہ ان جماعتوں نے اپنے جرائم کو اسلام کا نام دے کر چھپانے کی کوشش کرتی ہیں اور حتمی طور پر اسے 'جہاد' قرار دیتی ہیں۔ انہوں نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ جو لوگ اپنی غیر اسلامی حرکتوں کو جہاد کا نام دیتے ہیں، انہیں جان لینا چاہے کہ وہ جہاد نہیں بلکہ ظلم اور زیادتی کا ارتکاب کر رہے ہیں، جو کسی طور جہاد قرار نہیں دی جا سکتی۔ انہوں نے مسلمان نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ انتہا پسند جماعتوں کا ہدف نہ بنیں کیونکہ ان کی نیت زمین میں فساد پھیلانا ہے۔