داعش نے فلسفے اور کیمیا کی تعلیم پر پابندی لگا دی

پابندی کی زد میں شام کے شہر راقا کے تعلیمی ادارے آئیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراق اور شام میں بیک وقت عسکریت میں مصروف داعش نے شام کے زیر قبضہ علاقوں کے تعلیمی اداروں میں فلسفے اور کیمیا کی درس و تدریس پر پابندی عائد کر دی ہے۔ داعش کی طرف سے عائد کردہ اس پابندی کا اطلاق شام کے شمالی حصے کے شہر راقا کے طلبہ اور طالبات پر ہو گا۔

شام میں انسانی حقوق کی صورت حال پر نظر رکھنے والے لندن میں قائم ادارے '' آبزر ویٹری برائے انسانی حقوق کی رپورٹ کے مطابق عسکریت پسندوں نے اساتذہ اور سکولوں کے منتظمین کو حکم دیا گیا ہے کہ راقا کے تعلیمی اداروں میں اسلام کے مطابق نظام تعلیم ترتیب دیا جائے۔

داعش نے یہ بھی کہا ہے کہ اساتذہ کی طرف سے ترتیب دیے گئے اس نظام تعلیم پر داعش کا قائم کردہ بورڈ نظر ثانی کرے گا۔ اس حوالے سے راقا کے اساتذہ کے لیے مشاہروں اور اعزازیوں کو معقول بنانے کی بھی بات کی گئی۔

فلسفے اور کیمیا کی تعلیم پر پابندی کے جواز کے طور پر داعش کی طرف سے کہا گیا ہے کہ '' ان دونوں مضامین خدا کے بنائے گئے قوانین کے منافی ہیں۔ ''

واضح رہے سنی عسکریت پسندوں کی طرف سے پہلے ہی شام کے اس صوبے میں ایسے کئی تعلیمی اداروں کو بند کیا جا چکا ہے جو شامی رجیم کے زیر انتظام تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں