پاپائے روم کی زندگی کے دو،تین سال باقی؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

رومن کیتھولک کے روحانی پیشوا پوپ فرانسیس نے کہا ہے کہ ان کی زندگی کے دوتین سال باقی رہ گئے ہیں۔انھوں نے اپنی زندگی کے بارے میں یہ پیشین گوئی جنوبی کوریا کے حالیہ دورے سے ویٹی کن واپسی کے دوران طیارے پر اپنے ہم سفر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کی ہے۔

برطانوی روزنامے ڈیلی میل کے مطابق پوپ فرانسیس نے کہا کہ ''ان کے پاس رومن کیتھولک چرچ میں اصلاحات کے لیے بہت کم وقت رہ گیا ہے''۔ایک اور سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ ''وہ خود کو کوئی بہت زیادہ اہم نہیں سمجھتے ہیں کیونکہ ان کے پاس دو یا تین سال ہی رہ گئے ہیں اور پھر انھیں باپ کے گھر جانا ہے''۔

پوپ فرانسیس کو مارچ 2013ء میں رومن کیتھولک کا روحانی پیشوا بنایا گیا تھا مگر وہ خرابیِ صحت کے باوجود مسلسل غیرملکی دورے کیے ہیں اور اپنی مصروفیات کو جاری رکھا ہے۔ویٹی کن کے ایک ذریعے کے مطابق ستتر سالہ پوپ پہلے بھی اپنے قریبی حلقے کے لوگوں کو یہ کَہ چکے ہیں کہ ان کے پاس چند ایک سال ہی رہ گئے ہیں۔انھوں نے یہ بھی کہا کہ اگر انھوں نے یہ سمجھا کہ وہ اپنے فرائض احسن طریقے سے انجام نہیں دے سکتے تو وہ پاپائیت سے ریٹائرمنٹ پر غور کریں گے۔

پوپ فرانسیس نے اپنے طیارے میں سفر کے دوران یہ بھی کہا تھا کہ ان کے پیش رو پوپ بینی ڈکٹ شانزدہم نے مستعفی ہوکر ایک مثال قائم کردی تھی اور وہ بھی ان کی تقلید کرسکتے ہیں۔ویٹی کن کے ذرائع کے مطابق پوپ نے اپنی خراب صحت کی بنا پر اپنے بعض بیرونی دورے منسوخ بھی کردیے تھے تا کہ انھیں آرام کا موقع مل سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں