.

یمن میں دھماکے، بریگیڈئر جنرل سمیت چار فوجی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں بم دھماکوں کے دو الگ الگ واقعات میں ایک بریگیڈیئر جنرل سمیت کم سے کم چار فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔

العربیہ ٹی وی کے نامہ نگار کے مراسلے کے مطابق وادی حضر موت میں سیون اور شبام شہروں کے درمیان فوج کی ایک جیپ سڑک کنارے نصب بارودی سرنگ سے ٹکرا گئی جس کے نتیجے میں زور دار دھماکہ ہوا اور جیپ میں سوار تین فوجی ہلاک اور چھ زخمی ہو گئے۔

عینی شاہدین نے بتایا کہ فوج کی گشتی پارٹی پر اس وقت حملہ کیا گیا جب وہ سیئون شہر سے الشبام کی جانب جا رہی تھی۔

خیال رہے کہ گذشتہ چند ماہ سے وادی حضر موت میں شدت پسند تنظیم القاعدہ کی سرگرمیوں میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ القاعدہ نے حضر موت کے پہاڑی علاقوں میں اپنے ٹھکانے بنا رکھے ہیں۔

ادھر صنعاء میں ایک اور عسکری ذریعے نے اطلاع دی ہے کہ جنوبی یمن کے شہر عدن میں المنصورہ کالونی میں فوج کے بریگیڈئیر جنرل کی گاڑی کو ریمورٹ کنٹرول بم دھکاکے سےاڑا دیا گیا جس کے نتیجے میں بریگیڈیئر جنرل احمد محمد صالح العمری ہلاک ہو گیا۔

یہ واقعہ المنصورہ کالونی میں قائم سینٹرل جیل سے کچھ ہی فاصلے پر پیش آیا ہے۔ عدن سے طبی ذرائع کا کہنا ہے کہ بم دھماکے کے نتیجے میں بریگیڈئر احمد العمری شدید زخمی ہو گئے جو اسپتال منتقلی سے قبل ہی دم توڑ گئے تھے تاہم ان کا ایک بیٹا شدید زخمی حالت میں اسپتال میں داخل کرا دیا گیا ہے۔