.

لیبیا: بنغازی کے اہم ہوائی اڈے پر راکٹوں سے حملہ

طرابلس ہوائی اڈے پر عسکریت پسندوں کے قبضے کے بعد کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں شدت پسند اسلامی عسکریت پسندوں کی جانب سے دارالحکومت طرابلس کے مرکزی ہوائی اڈے پر قبضے کے بعد ملک کے مشرقی شہر بنغازی میں اب تک کام کرنے والے آخری 'الابرق ہوائی اڈے' پر بھی راکٹوں سے حملہ کیا گیا ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے 'رائیٹرز' کے مطابق الابرق ہوائی اڈے کے ڈائریکٹر نے راکٹ حملوں کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ راکٹ سوموار کی شام نامعلوم سمت سے داغے گئے تھے، جن کے نتیجے میں ایئر پورٹ کی عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے مصر اور تیونس سمیت کئی دوسرے ملکوں ‌نے طرابلس کے مرکزی ہوائی اڈے کے بجائے اپنی تمام پروازوں کو مشرقی بنغازی کے الابرق ہوائی اڈے کو استعمال کرنے کی ہدایات دی تھیں۔ اس ہوائی اڈے پر راکٹ حملوں کے بعد غیر ملکی پروازوں کا سلسلہ منطقع ہونے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔

ہوائی اڈے کے ڈائریکٹر ابوبکر العبیدی نے بتایا کہ راکٹ حملوں کے باوجود فضائی ٹریفک معمول کے مطابق جاری ہے۔

گذشتہ ہفتے تیونس نے اپنی تمام پروازوں کا رخ طرابلس کے بجائے الابرق اور طبرق ہوائی اڈوں کی طرف موڑ دیا تھا۔ خیال رہے کہ طرابلس میں‌ کشیدگی کے بعد تیونس واحد ملک ہے جس کی پروازوں کا سلسلہ جاری رہا ہے۔

ہفتے کے روز مصراتہ سے تعلق رکھنے والے جنگجوئوں نے الزنتان کے عسکریت پسندوں کو شکست دیتے ہوئے طرابلس کے مرکزی ہوائی اڈے پر قبضہ کر لیا تھا۔ گولہ باری سے ہوائی اڈے کو تباہ کر دیا گیا تاہم ابھی تک کسی ایک فریق نے بھی اس کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔ عسکریت پسند ہوائی اڈے کو تباہ کرنے کی ذمہ داری ایک دوسرے پر عائد کر رہے ہیں۔