فرانس:مراکشی نژاد مسلم وزیر کے خلاف نسل پرستانہ مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

فرانس کی مراکشی نژاد وزیرتعلیم نجات ولود بلکاجیم نے اپنے خلاف میڈیا پر نسل پرستانہ مہم کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ ان کا احترام کیا جائے۔

انھوں نے یہ بات دائیں بازو کے فرانسیسی ہفت روزے ''منٹ'' کی ایک رپورٹ کے ردعمل میں کہی ہے۔اس جریدے نے آیندہ ہفتے شائع ہونے والے ایڈیشن میں یہ لکھا ہے کہ ''وزیر بالکاجیم مذہبی اور نسلی پس منظر کی حامل ہیں''۔

ولود بلکاجیم نے بدھ کو ایسوسی ایٹڈ پریس سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ '' میں احترام پر زوردیتی ہوں اور میں خاص طور یہ بات دُہرانا چاہتی ہوں کہ نسل پرستی کوئی رائے نہیں بلکہ ایک جُرم ہے''۔

اس میگزین کو گذشتہ سال بھی اسی طرح نسل پرستانہ روش اختیار کرنے پر تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔اس نے فرانس کے سیاہ فام وزیرانصاف کی تصویر اپنے سرورق پر شائع کی تھی اور ساتھ لفظ ''بنانا'' لکھ دیا تھا۔

فرانس کے نسل پرستی کے مخالف ایک گروپ ایس او ایس نے وزیر تعلیم کے دفاع کے لیے ایک مہم شروع کی ہے۔فرانس کے انسانی حقوق کے قومی کمیشن کا کہنا ہے کہ گذشتہ بیس سال کے دوران نسل پرستی پر مبنی واقعات میں پانچ گنا اضافہ ہوا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں