داعش کی 'معاونت' پر امریکی شہری کے خلاف فردِ جرم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکا میں ایک شہری پر فردِ جرم عائد کر دی گئی ہے۔ اس پر الزام ہے کہ اس نے اسلامی ریاست کے اسلام پسندوں کی مدد اور امریکی فوجیوں کو قتل کرنے کی کوشش کی۔

امریکی محکمہ انصاف کے مطابق فیڈرل گرینڈ جیوری نے نیویارک میں روچیسٹر کے ایک تیس سالہ رہائشی مفید الفقیہ پر سات الزامات عائد کيے ہيں۔ فردِ جرم عائد کرنے کا فیصلہ امریکی تفتیشی ادارے ایف بی آئی کی روچیسٹر جوائنٹ ٹیررازم ٹاسک فورس کی ایک تفتیش کے نتیجے میں کيا گیا۔

خبر رساں ادارے 'رائیٹرز' نے عدالتی دستاویزات کے حوالے سے بتایا ہے کہ فقیہ نے گزشتہ برس کے آغاز سے تین لوگوں کی مدد کرنے کی کوشش کی تاکہ وہ شام جا سکیں اور وہاں سنی شدت پسند گروہ اسلامی ریاست کے ساتھ مل کر لڑائی میں حصہ لیں۔ ان تین افراد میں سے دو ایف بی آئی کے ساتھ تعاون کر رہے تھے.

حکام کا کہنا ہے: ’’فقیہ نے عراق سے واپس آنے والے امریکی فوجیوں پر گولی چلانے اور انہیں قتل کرنے کا منصوبہ بھی بنایا۔ فوجیوں کو قتل کرنے کے منصوبے کے تحت، فقیہ نے بااعتماد ذرائع سے سائلنسر لگے دو پستول اور گولیاں خریدیں۔‘

محکمہ انصاف کے اعلامیے کے مطابق ایف بی آئی نے پستول فقیہ کو دیے جانے سے پہلے ہی ناکارہ بنا دیے تھے۔

نیویارک کے مغربی ضلع کے اٹارنی ولیم ہوچل نے ایک اعلامیے میں کہا: ’’مفید الفیقہ پر فردِ جرم عاید کر کے حکومت نے ثابت کر دیا ہے کہ وہ آئی ایس کی راہ میں رکاوٹ بننے اور اسے شکست دینے کے لیے تمام دستیاب طریقے استعمال کرے گی۔‘‘

اسلامک اسٹیٹ کو مادی مدد فراہم کرنے کے تین الزامات میں سے ہر ایک کے لیے زیادہ سے زیادہ پندرہ برس کی سزائے قید ہو سکتی ہے جبکہ اقدامِ قتل کا الزام ثابت ہونے پر بیس سال کی سزائے قید ہو سکتی ہے۔ اس مشتبہ شخص کو آتشیں اسلحہ اور سائلنسر رکھنے کے الزامات کا بھی سامنا ہے۔

خیال رہے کہ امریکی صدر باراک اوباما اسلامک اسٹیٹ کے خلاف ایک بین الاقوامی اتحاد تشکیل دینے کی کوشش کر رہے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے گزشتہ ماہ نیویارک ٹائمز میں شائع ہونے والے ایک کالم میں اس بات پر زور دیا تھا کہ امریکا کی سربراہی میں مختلف ملکوں کے ممکنہ وسیع تر اتحاد کو آئی ایس کے خلاف کارروائی کرنی چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں