سکاٹش عوام کی آزادی کی دھن، فلسطین تک بکھر گئی

مغربی کنارے میں فلسطینیوں نے روائتی "بیگ پائپ" سے اظہار یکجہتی کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بین کے مدھر سروں سے ملتے جلتے سروں کو آواز دینے والے والا باجا اگرچہ سکاٹ لینڈ کے لوگوں کے لیے ایک جانا پہچانا آلہ موسیقی ہے، لیکن ان دنوں سکاٹ لینڈ کے عوام کے اس روائتی آلہ موسیقی "بیگ پائپ" سے فلسطینیوں نے دھنیں بکھیرنا شروع کر رکھی ہیں کیونکہ سکاٹ لینڈ کے عوام آزادی کے لیے ہونے والے ریفرنڈم میں مصروف ہیں۔

آزادی کی اس دھن میں مگن سکاٹش عوام کے لیے نیک جذبات کے اظہار کے لیے مغربی کنارے کے فلسطینیوں نے بیگ باجے کی ان مدھر دھنوں کو بجا کر آپنی آزادی کے عزم کو بھی تازہ کر لیا ہے۔

آزادی کے متوالوں کی آواز میں آواز ملانے کے لیے اکثر بینڈ باجے والے بیت جلا سے مغربی کنارہ آئے تھے۔ ان کی آمد سے ہر طرف آزادی کی گونج سنائی دینے لگی۔

ان فلسطینیوں میں سے ایک نے جس کا نام مجید تھا، کہا "اس 'بیگ پائپ' کے بجانے والے کے طور پر میں اس کی تاریخ کوجانتا ہوں، اس لیے میں اسے جنگی موسیقی کے آلے کا نام دوں گا۔" مجید کے بقول اس نے یہ بیگ پائپ بجانے والا سکاوٹ گروپ دس سال کی عمر میں جوائن کیا تھا۔

مجید کے بقول "تاریخی اعتبار سے سکاٹش لوگ 'بیگ پائپ' کو میدان جنگ میں بجا کر اس سے حربی دھنیں بکھیرا کرتے تھے۔ "علاوہ ازیں عوامی تہواروں، کرسمس اور ایسٹر کے موقع پر بھی اس کی دھنیں سکاٹش لوگوں کو بھلی لگتی ہیں۔

مقامی فلسطینی جو اسرائیل کی طرف سے مزید زمین پر قبضے کے خوف کا شکار ہیں، سکاٹ لینڈ کے لوگوں کی آزادی کے لیے جاری کوششوں اور امنگوں کے ساتھ ہیں۔

سکاٹ عوام کے ساتھ یکجہتی کی دھنیں بکھیرنے کے موقع پر فلسطینیوں کا کہنا تھا "ہم اپنی پہچان ان سکاٹش عوام کے ساتھ چاہتے ہیں جو برطانیہ سے آزادی کے لیے کوشاں ہیں، ہر فرد کو حق ہے کہ وہ اپنے مستقبل کا خود فیصلہ کرے۔"

یک اور بیگ پائپ بجانے والے فلسطینی کا کہنا تھا "سکاٹش بیگ پائپ فلسطینی سکاوٹوں کے لیے برطانوی ہی لائے تھے۔"

واضح رہے آٹھ جولائی سے اسرائیل کی طرف سے غزہ پر مسلط کی جانے والی حالیہ تباہ کن جنگ کے بعد فلسطینی عوام میں سکاٹ لینڈ کے عوام کی آزادی کے حق میں پہلے سے بھی زیادہ حامی ہو گئے ہیں۔

اسرائیل کی اس مسلط کردہ 50 روزہ جنگ کے نتیجے میں 2100 سے زائد فلسطینی شہید اور ہزاروں زخمی ہو گئے تھے۔

دوسری جانب برطانوی نشریاتی اداروں نے سکاٹ لینڈ کی آزادی کے لیے ہونے والے ریفرنڈم میں آزادی پسندوں کی اب تک کی برتری کو تسلیم کررہے ہیں، تاہم ان کا کہنا ہے کہ یہ برتری معمولی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں