.

قاہرہ میں بم دھماکا، دو پولیس اہلکاروں سمیت چار ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری دارلحکومت قاہرہ سے 'العربیہ' کے نامہ نگار نے سرکاری ٹی وی کی عمارت کے قریب واقع دفتر خارجہ کے عقب میں زوردار دھماکے کی اطلاع دی ہے جس میں عینی شاہدین کے مطابق چار افراد کے ہلاک ہو گئے۔ دھماکے کے بعد سائرن بجاتی ایمبولینس گاڑیاں جائے حادثہ کی سمت جاتی دیکھی گئیں ہیں۔ مرنے والوں میں دو پولیس اہلکار بھی شامل ہیں۔

حادثے کے بارے میں مزید کوئی تفصیل نہیں مل سکی، بعض اطلاعات کے مطابق دھماکے کا نشانہ پولیس کی ایک پارٹی تھی جو معمول کی گشت پر تھی۔ یاد رہے کہ حادثے کی جگہ انتہائی رش ہوتا ہے۔ اس میں متعدد سرکاری دفاتر اور رہائشی عمارتیں موجود ہیں۔

مصر کے اندر یہ دھماکا اس وقت ہوا ہے کہ جب صدر عبدالفتاح السیسی شام اور عراق میں سرگرم انتہا پسند تنظیموں کا قلع قمع کرنے کے لئے عالمی برادری کی کوششوں میں ہاتھ بٹانے کا عندیہ ظاہر کر چکے ہیں۔

امریکی خبر رساں ادارے سے بات کرتے ہوئے جنرل السیسی نے کہا کہ وہ ایک برس سے مشرق وسطی میں دہشت گردی کے خطرات سے آگاہ کرتے چلے آ رہے ہیں، تاہم دنیا نے اس ضمن میں کوئی اقدام نہیں اٹھایا۔ اب ان تنظیموں کی سرکوبی کے لئے بڑے پیمانے پر اسٹرٹیجک کارروائیوں کی ضرورت محسوس کی جا رہی ہے۔