.

مشرقی یروشلم: یہودی بستیوں کی تعمیر باعث تشویش ہے: اوباما

اسرائیل قریبی اتحادیوں سے دور ہو جائے گا: ترجمان وائٹ ہاوس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی صدر براک اوباما نے اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کو مقبوضہ مشرقی یروشلم میں یہودی بستیوں کی تعمیر پر امریکی تشویش سے ایک مرتبہ پھر آگاہ کر دیا ہے۔

صدر اوباما نے اس تشویش کا اظہار بدھ کی رات وائٹ ہاوس میں ملاقات کے لیے آنے والے نیتن یاہو سے بات کرتے ہو ئے کیا ہے۔ خیال رہے اسرائیل عرب مقبوضہ علاقے میں عالمی برادری کی تمام تر تنقید کے باوجود 2600 نئے گھر تعمیر کرنے کا منصوبہ بنائے ہوئے ہے۔

وائٹ ہاوس کے ترجمان جوش ایرنیسٹ نے امریکی تشویش کے بارے میں بتایا '' امریکا کو حساس علاقے میں گھر تعمیر کرنے کے اس منصوبے پر گہری تشویش ہے۔'' ترجمان نے خبردار کیا '' اس منصوبے کی وجہ سے اسرائیل اپنے قریبی اتحادیوں کو بھی خود سے دور کر لے گا۔''

امریکی ترجمان کا کہنا تھا '' مشرقی یروشلم میں یہودی بستیوں کی تعمیر ایک تکلیف دہ پیغام ہے۔ '' اس سلسلے میں ایک ''واچ ڈاگ '' ادارہ اس سے پہلے ہی کہہ چکا ہے کہ '' اسرائیل مشرقی یروشلم میں 2610 یہودی آباد کاروں کو بسانے کی تیاری کر رہا ہے۔

دریں اثناء چند روز پہلے ایک اور این جی او کی مرتب کردہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اسرائیل نے رواں سال کے پہلے چھ ماہ کے دوران اب تک نئے یہودی بسانے کے لیے جو گھر بنائے ہیں ان میں سے ایک چوتھائی اسی مشرقی یروشلم میں بنائے ہیں۔

ایک عالمی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ اسرائیلی حکومت نے ان نئی تعمیرات کے لیے کوئی ٹینڈر طلب نہیں کیا، لیکن کئی ماہ پہلے سے ہی تعمیرات کا آغاز کیا جا چکا ہے۔