.

انتہا پسندی کا خاتمہ کرنا ہوگا:شاہ عبداللہ

انتہا پسندی کا اسلام سے تعلق نہیں،منحرف گروپ شیطانی ایجنٹ ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے فرمانروا خادم الحرمین الشریفین شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز نے کہا ہے کہ مذہبی انتہا پسندی ایک لعنت ہے اور ہمیں اس کا خاتمہ کرنا ہوگا۔

انھوں نے یہ بات اسلامی ممالک سے حج کے لیے آنے والے وفود کے لیڈروں سے تقریر میں کہی ہے۔انھوں نے کہا کہ انتہا پسندی سے ہی دہشت گردی جنم لیتی ہے ،ہمیں اس کے استیصال کے لیے اپنی کوششوں کو مربوط بنانا ہوگا اور اس کو شکست دینا ہوگی کیونکہ اس کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

شاہ عبداللہ کی یہ تقریر سعودی ولی عہد شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز نے غیرملکی سرکردہ شخصیات کے اجتماع میں پڑھ کر سنائی ہے۔انھوں نے کہا کہ ''انتہا پسندی ایک لعنت ہے اور اس کو جڑ سے اکھاڑ کر ہی ہم اس کا مکمل خاتمہ کرسکتے ہیں۔ہم اس کے خاتمے کے لیے غیرمتزلزل اور پُرعزم انداز میں کوششیں کررہے ہیں''۔انھوں نے واضح کیا کہ نوجوانوں کو انتہا پسندانہ نظریات سے بچانے کی ضرورت ہے۔

شہزادہ سلمان نے منیٰ میں اتوار کو یہ خطاب کیا ہے جہاں حجاج کرام عید الاضحیٰ کے دوسرے روز مناسک کی ادائی میں مصروف تھے اور شیطان کو کنکریاں مار رہے تھے۔ان کے مخاطبین میں بعض اسلامی ممالک کے صدور ،ولی عہد، شہزادے اور دیگر اعلیٰ عہدے دار بھی شامل تھے۔

خادم الحرمین الشریفین نے قبل ازیں اپنے ایک اور پیغام میں انتہا پسندوں کی جانب سے سعودی مملکت کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشوں کو ناکام بنانے پر اپنے ملک کی سکیورٹی فورسز کی خدمات کو سراہا ہے۔انھوں نے ان منحرف گروپوں کو شیطان کے ایجنٹ قراردیا ہے اور کہا ہے کہ ہم مادرِوطن کے دفاع میں اپنی جانیں قربان کرنے والوں کو کبھی فراموش نہیں کریں گے۔