ایران: امریکی ڈرون کی ہوبہو نقل کی پرواز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایران کے سرکاری ٹیلی ویژن نے بدھ کے روز ایک بغیر پائیلٹ جاسوس طیارے کی فوٹیج نشر کی ہے۔اس کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ یہ 2011ء میں ایران میں گر کر تباہ ہونے والے امریکا کے بغیر پائیلٹ جاسوس طیارے کی ہو بہو نقل ہے۔

فوٹیج میں ایک سیاہ رنگ کا طیارہ پہاڑی علاقے اور زرعی زمینوں کے اوپر پرواز کررہا ہے اور پھر وہ ایک نامعلوم ہوائی اڈے پر اُتر جاتا ہے۔یہ دراصل اس بات کا ثبوت ہے کہ ایرانی ساختہ ڈرون نے کامیابی سے پرواز کر لی ہے۔

پاسداران انقلاب ایران کے خلائی ڈویژن کے سربراہ جنرل امیر علی حاجی زادے نے کہا ہے کہ موجودہ ایرانی سال کے اختتام (مارچ) سے قبل اس طرح کے دو یا تین اور ڈرون بھی تیار کرلیے جائیں گے۔اس کے بعد آیندہ سال بغیر پائیلٹ جاسوس طیاروں کی بڑے پیمانے پر تیاری شروع کردی جائے گی۔

انھوں نے دعویٰ کیا ہے کہ ایران نے ڈرون کے ڈیزائن کو تبدیل کیا ہے جس سے اس کی کارکردگی کو بہتر بنا دیا گیا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ ایرانی ساختہ ڈرون کا وزن امریکی ڈرون سے بہت حد تک کم ہے،یہ ایندھن کم خرچ کرتا ہے،اس کی رفتار میں اضافہ کیا گیا ہے اور اس کی بہتر باڈی کی بدولت اس کی پرواز کا دورانیہ بھی بڑھا دیا گیا ہے۔

حاجی زادے نے سرکاری ٹی وی سے نشر ہونے والے بیان میں کہا کہ ''امریکیوں نے ڈرون کی باڈی کی تیاری میں دھات کو استعمال کیا تھا لیکن ہم نے اس کا بالکل بھی استعمال نہیں کیا کیونکہ اس طرح راڈارز اس کا جلد سراغ نہیں لگا سکیں گے''۔

انھوں نے بتایا ہے کہ امریکی ڈرون آر کیو 170 دسمبر 2011ء میں پڑوسی ملک افغانستان سے ایران کی حدود داخل ہوا تھا اور اس کو مار گرایا گیا تھا۔اب ایران نے اس کے تمام ڈیٹا کو ڈی کوڈ کر لیا ہے۔ حاجی زادے نے امریکیوں پر پھبتی کستے ہوئے کہا کہ ''وہ جب اس ڈرون کو پرواز کرتے ہوئے دیکھیں گے تو ان کے ہوش ٹھکانے آ جائیں گے''۔

ایران کا دعویٰ ہے کہ اس نے حالیہ برسوں کے دوران متعدد امریکی ڈرون پکڑے ہیں۔ان میں بوئنگ کمپنی کا تیار کردہ سکین ایگل ڈرون بھی شامل تھا جو خلیج فارس سے ایران کی فضائی حدود میں داخل ہوا تھا۔ایرانی اب اس سکین ایگل کی بھی ہو بہو نقل تیار کرنے کی کوشش کررہے ہیں اور وہ اس کو بہت جلد زیراستعمال لانا چاہتے ہیں۔

واضح رہے کہ ایران 1980ء کے عشرے سے فوجی خودکفالت کے پروگرام پرعمل پیرا ہے اور وہ گاہے گاہے عسکری ٹیکنالوجی کے میدان میں اپنی کامیابیوں کے اعلانات کرتا رہتا ہے۔اس نے حالیہ برسوں کے دوران جدید جنگی طیارے ،ٹینک ،میزائل ،آبدوزیں اور ڈرونز بنانے کے اعلانات کیے ہیں لیکن ان کی آزاد ذرائع سے تصدیق ممکن نہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں