.

550 جرمن جنگجو بھی داعش کی صٖفوں میں شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جرمن وزیر خارجہ ٹومس ڈومیزییر نے انکشاف کیا ہے کہ ان کے ملک سے تعلق رکھنے والے 550 شدت پسند بھی دولت اسلامی 'داعش' میں شامل ہونے کے لیے عراق اور شام روانہ ہو چکے ہیں۔

جرمن ٹیلی ویژن نیٹ ورک "فونیکس" کو دیے گئے ایک انٹرویو میں وزیر داخلہ نے کہا کہ تازہ ترین اعداد وشمار بتاتے ہیں کہ جرمنی سے 550 افراد داعش میں شامل ہونے کے لیے شام اور عراق چلے گئے ہیں۔ قبل ازیں جرمنی حکام کی جانب سے داعش میں شامل ہونے والے جنگجوئوں کی تعداد 450 بتائی گئی تھی۔

وزیر داخلہ ڈومیزییر کا کہنا تھا کہ پچھلے چند برسوں کے مقابلے میں رواں سال بڑی تعداد میں شدت پسندانہ نظریات کے حامل افراد داعش میں شامل ہونے کے لیے بیرون ملک روانہ ہوئے ہیں۔ ان میں کچھ خواتین بھی شامل ہیں۔

وزیر داخلہ نے خدشہ ظاہر کیا کہ داعش میں شامل ہونے والے جرمن جنگجو خود واپسی پر خود ان کے ملک کے لیے خطرہ بن سکتے ہیں۔ اسی خطرے کے پیش نظر وہ سخت ترین حفاظتی تدابیر پر غور کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت بھی جرمنی میں 230 ایسے عناصر موجود ہیں جو ملک کی سلامتی کے لیے خطرہ بن سکتے ہیں۔

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ اکتوبر میں جرمن حکومت کی جانب سے یہ اعلان سامنے آیا تھا کہ وہ ملک میں موجود تمام شدت پسندوں کے پاسپورٹ منسوخ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے تاکہ وہ بیرون ملک دہشت گرد گروپوں میں شمولیت کے لیے سفر نہ کر سکیں۔