.

تیونس: صدارتی انتخاب کے لیے دوبارہ پولنگ ہوگی

الباجی قائد السبسی پہلے اور صدر منصف مرزوقی دوسرے نمبر پر رہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس میں منعقدہ پہلے آزادانہ صدارتی انتخابات میں کوئی بھی امیدوار کامیابی اور دوسرے مرحلے کی پولنگ سے بچنے کے لیے درکار مطلوبہ ووٹ حاصل کرنے میں ناکام رہا ہے جس کے بعد دسمبر میں پہلے اور دوسرے نمبر پر رہنے والے امیدوار میں سے کسی ایک کے انتخاب کے لیے دوبارہ پولنگ ہوگی۔

تیونس کے الیکشن کمیشن کے سربراہ محمد شفیق سرسار نے منگل کو نیوزکانفرنس میں بتایا ہے کہ نداتیونس کے امیدوار سابق وزیراعظم الباجی قائد السبسی نے 39.46 فی صد اور موجودہ صدر منصف مرزوقی نے 33.43 فی صد ووٹ حاصل کیے ہیں۔اب ان دونوں امیدواروں کے درمیان 28 دسمبر کو صدارتی انتخاب کے دوسرے مرحلے میں دوبارہ مقابلہ ہوگا۔

تیونس میں صدارتی انتخابات کے لیے اتوار کو پولنگ ہوئی تھی اور غیر حتمی نتائج کے حوالے سے نداتیونس کے قائدین نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ ان کے امیدوار نے 47.8 فی صد حاصل کیے ہیں لیکن الیکشن کمیشن کی جانب سے اعلان کردہ نتائج کے مطابق ان کے حاصل کردہ ووٹوں کی شرح چالیس فی صد سے بھی کم رہی ہے۔

صدارتی انتخابات میں سابق مطلق العنان صدر زین العابدین بن علی کی حکومت میں خدمات انجام دینے والے کئی سابق وزراء بھی قسمت آزمائی کررہے تھے لیکن وہ نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ ان میں بائیں بازو کے امیدوار حما الہمامی ،کاروباری شخصیت سلیم الریاحی ،خاتون امیدوار میجسٹریٹ کلثوم قانو شامل ہیں۔تیونس کے قریباً تریپن لاکھ افراد صدارتی انتخاب میں ووٹ دینے کے اہل تھے۔