.

امریکا شام میں نوفلائی زون کے لیے تیار نہیں

ترکی سے نوفلائی زون کے قیام پر مذاکرات نہیں ہورہے:وائٹ ہاؤس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا شام میں نوفلائی زون کے قیام کے لیے تیار نہیں ہے اور نہ اس کی اس سلسلے میں ترکی کے ساتھ فی الوقت کوئی بات چیت ہورہی ہے۔

یہ بات وائٹ ہاؤس کے ترجمان جوش ایرنسٹ نے واشنگٹن میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ہے۔انھوں نے بتایا ہے کہ ''امریکا ترکوں کے ساتھ مختلف آپشنز پر تبادلہ خیال کے لیے تیار ہے لیکن اس وقت شام کی فضائی حدود میں نوفلائی زون کا قیام مذاکرات کے ایجنڈے میں شامل نہیں ہے''۔

واضح رہے کہ ترکی ایک عرصے سے شام کے اندر ایک بفر زون کے قیام کی وکالت کررہا ہے تاکہ خانہ جنگی اور داعش ،امریکا کی جنگ میں بے گھر ہونے والے شامیوں کو وہاں رکھا جا سکے اور انھیں وہیں انسانی امداد پہنچائی جاسکے۔

لیکن ترکی اب تک اپنے نیٹو اتحادی امریکا کو شام میں اس نوفلائی زون کے قیام کے لیے آمادہ کرنے میں ناکام رہا ہے۔اس وقت امریکا کے لڑاکا طیارے بھی ترکی کی جنوبی سرحد کے نزدیک واقع شام کے شمالی شہروں میں داعش کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کررہے ہیں جس کے نتیجے میں شامی مہاجرین کی تعداد اور مسائل میں روز بروز اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

امریکی میڈیا میں اسی اختتام ہفتہ پر بعض ایسی رپورٹس منظرعام پر آئی تھیں جن میں کہا گیا تھا کہ نائب صدر جوزف بائیڈن کے ترکی کے حالیہ دورے کے بعد شام میں نوفلائی زون کے قیام سے متعلق امریکی موقف میں تبدیلی رونما ہوئی ہے مگر جوش ایرنسٹ نے ان میڈیا رپورٹس کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا کوئی معاملہ ہے اور نہ نوفلائی زون کا قیام فی الوقت امریکا کے زیر غورہے۔