.

مقبوضہ کشمیرمیں حملے، 11 اہلکاروں سمیت 20 ہلاک

متعدد حملوں پر امریکی دفتر خارجہ کا اپنی شدید تشویش کا اظہار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں ایک فوجی کمیپ پر حملے کے دوران مشتبہ حریت پسندوں اور سکیورٹی فورسز کے درمیان جھڑپ میں 20 افراد ہلاک ہوئے، جن میں 11 اہلکار شامل ہیٕں۔

مقامی عہدیداروں کے مطابق، ہلاک ہونے والوں میں ایک افسر سمیت چھ فوجی جب کہ تین پولیس اہلکار شامل ہیں۔ جب کہ لڑائی میں چھ حملہ آور بھی مارے گئے۔

حکام کے مطابق مشتبہ حریت پسندوں نے اڑی سیکٹر میں ایک فوجی کیمپ میں گھسنے کی کوشش کی اور اس دوران دستی بموں اور خودکار ہتھیاروں کا استعمال کیا۔

درایں اثنا جمعہ کو سری نگر کے علاقے میں ایک مبینہ شدت پسند پولیس کے ساتھ جھڑپ میں مارا گیا۔ حکام کے مطابق مسلح شخص نے پولیس کی گشتی پارٹی پر حملہ کیا جس کے بعد اُس کی اہلکاروں کے ساتھ جھڑپ ہوئی۔

پاکستان اور بھارت کے درمیان متنازع علاقے کشمیر کے بھارتی حصے میں حالیہ دنوں میں حریت پسندوں کے حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

رواں ہفتے ہی ہندواڑا کے علاقے میں مشتبہ دہشت گردوں نے ایک فوجی پوسٹ پر حملہ کیا تھا جس میں ایک سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوا لیکن جوابی کارروائی میں چھ حملہ آور مارے گئے۔

بھارتی کشمیر میں انتخابات ہو رہے ہیں جن کی بھارتی قبضے کے خاتمے کے خواہاں حریت پسندوں کی طرف سے مخالف کی جا رہی ہے۔

انتخابات کے پہلے مرحلے میں لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے ووٹ ڈالنے کے لیے پولنگ اسٹیشنز کا رخ کیا اور بھارتی حکام کے مطابق یہ 'علاحدگی پسندوں' کے لیے ایک جواب ہے کہ کشمیر کے لوگ ان کی مخالفت کو تسلیم نہیں کرتے۔

حملوں پر امریکی تشویش

امریکی محکمہ خارجہ نے بھارتی زیرِ انتظام کشمیر میں حملے کی رپورٹ پر اپنی ’تشویش‘ کا اظہار کیا ہے۔

اخباری بریفنگ میں ایک سوال کے جواب میں، معاون خاتون ترجمان، میری ہارف نے کہا کہ کشمیر میں تشدد کی کارروائی کے معاملے پر ’ہمیں تشویش ہونا‘، ایک واضح امر ہے۔

ترجمان نے کہا کہ، ’ہم اب بھی یہی خیال کرتے ہیں کہ کشمیر سے متعلق مکالمے کی کسی نوعیت، رفتار اور دائرہ کار (اسکوپ) کا تعین کرنا، خود بھارت اور پاکستان کا کام ہے‘۔

ترجمان کے مطابق دونوں ملکوں میں امریکا کے سفارت خانے موجود ہیں، جو اِس نوعیت کے واقعات پر میزبان حکومتوں سے رابطے میں آتے ہیں؛ اور یقیناً دونوں کو باور کراتے ہیں کہ وہ پیش آنے والے ’ایشو‘ پر ایک دوسرے سے مل کر کام کریں۔