.

دبئی میں ہیرے جواہرات کے تین یورپی ڈاکو گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دبئی پولیس نے مشرقی یورپ کے ملک رومانیہ سے تعلق رکھنے والے ہیرے اور سونے کے زیورات کو چُرانے والے ایک گینگ کے تین ڈاکوؤں کو گرفتار کر لیا ہے۔ان ملزموں نے بتیس لاکھ ستر ہزار ڈالرز مالیت کے ہیرے جواہرات چُرائے تھے۔

متحدہ عرب امارات کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کی رپورٹ کے مطابق پولیس نے ان ڈاکوؤں کو پکڑنے کے لیے ''دا پرنس'' کے خفیہ نام سے کارروائی کی تھی اور انھیں واقعے کی اطلاع ملنے کے بہتر گھنٹے کے اندر ہی پکڑ لیا تھا۔

دبئی پولیس کے جنرل کمانڈر میجر جنرل خمیس مطر المزینہ نے منگل کے روز نیوزکانفرنس میں بتایا ہے کہ ''12 دسمبر کو ہونے والی ڈکیتی کی واردات کی منصوبہ بندی دبئی اور پیرس میں اس رنگ کے ارکان نے کی تھی''۔

پولیس سربراہ نے بتایا کہ انھیں دبئی میں جیولری کی ایک دکان کے وینڈر سے یہ اطلاع موصول ہوئی تھی کہ دو آدمی ان کی دُکان پر آئے اور انھوں نے یہ کہا کہ انھیں پیرس سے اس جیولری شاپ کے عرب مالک نے بھیجا ہے۔

جنرل المزینہ نے بتایا کہ اس کے بعد اس دکان دار نے پیرس میں اپنی کمپنی کے مالک سے رابطہ کیا اور ان سے اجازت ملنے کے بعد دونوں ڈاکوؤں کو بعض زیورات کو دیکھنے کی اجازت دے دی۔

ڈاکو جب دوسری مرتبہ دکان پر آئے تو وہ ساڑھے چھے کلو گرام وزنی سونے اور ہیرے کے زیورات ایک سفارتی سوٹ کیس میں ڈال کر لے گئے تھے۔ان زیورات کی مالیت تینتیس لاکھ ڈالرز تھی۔اس وینڈر کو مبینہ طور پر پیرس سے کمپنی کے مالک کی فون کال موصول ہوئی تھی اور اس نے اس سے کہا تھا کہ وہ ان زیورات کو آنے والے افراد کے حوالے کردے۔

ڈیل کے مطابق ان زیورات کی رقم پیرس میں کمپنی کے مالک نے وصول کرنا تھی لیکن یہ ڈیل پایہ تکمیل کو نہ پہنچ سکی اور ڈاکو زیورات ہتھیا کر رفوچکر ہوگئے۔

پولیس کو تحقیقات سے یہ پتا چلا تھا کہ ڈکیتوں کے اس رنگ نے پیرس میں مقیم کمپنی کے مالک کو گن پوائنٹ پر یرغمال بنا لیا تھا اور اس کو مجبور کیا تھا کہ وہ فون پردکان پر موجود وینڈر کو دونوں ڈکیتوں کو زیورات دینے کی ہدایت کرے۔جب اس مالک کو یرغمال بنانے والوں کو یقین ہوگیا کہ دبئی میں ان کے ساتھیوں نے زیورات والا سوٹ کیس وصول کر لیا ہے تو انھوں نے کمپنی مالک کو رہا کردیا تھا۔

اپنی رہائی کے بعد کمپنی کے مالک نے وینڈر کو صورت حال سے آگاہ کیا اور اس سے کہا کہ وہ پولیس کو اس سازش سے آگاہ کرے۔اس کے بعد پولیس نے بہتر گھنٹے میں ڈاکوؤں کو گرفتار کر لیا تھا اور چوری شدہ زیورات بھی برآمد کر لیے تھے۔دبئی کے حکام نے اب پیرس میں موجود ان کے ساتھیوں کی گرفتاری کے لیے انٹرپول اور فرانسیسی حکام سے رابطہ کیا ہے۔