.

تیونس:سابق وزیرداخلہ حبيب الصيد وزیراعظم نامزد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس کے صدر الباجی قائد السبسی نے سابق وزیرداخلہ حبیب الصید کو وزیراعظم نامزد کرکے نئی حکومت بنانے کی دعوت دی ہے۔

حبیب الصید تیونس کے سابق مطلق العنان صدر زین العابدین بن علی کی حکومت کا بھی حصہ رہے تھے۔جنوری 2011ء میں ان کے اقتدار کے خاتمے کے بعد قائم ہونے والی عبوری حکومت میں انھیں وزارت داخلہ کا قلم دان سونپا گیا تھا۔ وہ اسلامی جماعت النہضہ کے عبوری وزیراعظم حمادی جبالی کے بھی سکیورٹی ایڈوائزر رہے تھے۔

تیونس میں منعقدہ حالیہ پارلیمانی انتخابات میں سیکولر جماعت نداتیونس نے برتری حاصل کی تھی اور اس نے دوسو سترہ میں سے نواسی نشستیں حاصل کی تھیں۔ النہضہ نے انہتر نشستوں کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہی تھی۔اب ندا تیونس نے دوسری سیاسی جماعتوں کے ساتھ مشاورت کے بعد حبیب الصید کو نیا وزیراعظم نامزد کیا گیا ہے۔وہ عبوری وزیراعظم مہدی جمعہ کی جگہ لیں گے۔

نداتیونس کے نائب صدر محمد النصور نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ ''جماعت میں اور دوسری جماعتوں کے ساتھ مشاورت کے بعد وزارت عظمیٰ کے لیے حبیب الصید کے نام پر اتفاق رائے پایا گیا ہے۔وہ ایک آزاد شخصیت ہیں اور مہارت اور تجربے کے حامل ہیں''۔

نامزد وزیراعظم کو اپنی کابینہ کی تشکیل کے لیے ایک ماہ کا وقت دیا گیا ہے۔انھیں کابینہ کی پارلیمان سے منظوری کے لیے دوسری جماعتوں کی حمایت درکار ہوگی۔النہضہ نے اپنی حریف نداتیونس کی قیادت میں نئی حکومت میں شمولیت کے امکان کو مسترد نہیں کیا ہے۔