سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کا اتحاد و یکجہتی پر زور

پہلے نشری خطاب کے بعد شاہ سلمان اور ولی عہد کی بیعت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

خادم الحرمین الشریفین اور نئے سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے قوم سے اپنے پہلے نشری خطاب میں مسلمانوں اور عرب اقوام میں اتحاد و یکجہتی پر زور دیتے ہوئے کہا '' ہماری عرب اور اسلامی امہ کو آج غیر معمولی حد تک اتحاد و یکجہتی کی ضرورت ہے۔''

سعودی عرب کے سرکاری خبر رساں ادارے سعودی پریس ایجنسی کے مطابق شاہ سلمان نے اپنے پہلے نشری خطاب میں مملکت کو بانی مملکت شاہ عبدالعزیز بن سعود کے راستے پر رکھنے کے بھی عزم کا اظہار کیا۔

شاہ سلمان کا کہنا تھا'' ہم اللہ کی مدد سے اسی سیدھے راستے پر رہیں گے، جو مملکت سعودیہ کے قیام سے شاہ عبدالعزیز بن سعود اور ان کے بعد ان کے صاحبزادوں نے اختیار کیے رکھا ہے۔ ''

''العربیہ نیوز چینل'' کے مطابق شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے اپنے پہلے خطاب میں مزید کہا '' اللہ نے ہمیں اس مملکت کو اس سرزمین پر قائم کرنے کا موقع دیا ، جسے اللہ رب العزت نے نہ صرف اپنے پیغام کے لیے منتخب کیا بلکہ اسے مسلمانان عالم کا قبلہ بھی قرار دیا۔ ''

انہوں نے کہا ''ہمارا اتحاد کے فروغ کا سفر اپنی قوم کے دفاع کے لیے ہے اور یہی اسلام کی سچی تعلیمات سے ملنے والی رہنمائی ہے، اللہ نے ہمارے لیے اس مذہب کو امن، مہربانی اور اعتدال پسندی کے لیے پسند کیا ہے۔''

شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے اس موقع پر اپنے خطاب میں یہ بھی کہا '' میں نے اللہ سے رہنمائی کی دعا کی ہے کہ وہ مجھے اپنی محبوب عوام کی خدمت کرنے اور ان کی توقعات کا ادراک کرنے کی توفیق دے اور ہم اپنے ملک اور قوم کی سالمیت و استحکام کا تحفظ کر سکیں۔ ''

شاہی فرمان کے مطابق اس نشری خطاب کے بعد شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی وفاداری کا شاہی خاندان اور سعودی عوام کے ایک گروپ نے عہد کیا اور ان کی بیعت کی۔ نئے سعودی ولی عہد شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز کی بھی اسی موقع پر بیعت کی گئی۔

واضح رہے شاہ سلمان بن عبدالعزیز سعودی دارالحکومت ریاض میں انیس صد پینتیس میں پیدا ہوئے، وہ سعودی مملکت کے بانی شاہ عبدالعزیز کے پچیسویں صاحبزادے ہیں۔

انیس سال کی عمر میں انہیں امیر ریاض مقرر کیا گیا اور بعزاں وہ پچاس برس تک ریاض کے گورنر رہے۔ سنہ دوہزار گیارہ میں شاہ عبداللہ نے انہیں مملکت کا وزیر دفاع مقرر کیا جبکہ دوہزار بارہ میں وہ مملکت کے ولی عہد قرار پائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں