.

فرانس میں جہادیوں کے بھرتی نیٹ ورک کا انکشاف، گرفتاریاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانسیسی وزیر داخلہ بیرنار کازینیو کا کہنا ہے کہ فرانسیسی انسداد دہشت گردی پولیس نے منگل کے روز نوجوانوں کو شام میں جہاد کے لئے بھرتی کرنے والے نیٹ ورک کے آٹھ افراد کو حراست میں لیا ہے۔

وزارت داخلہ کے ٹویٹر اکائونٹ کے ذریعے سے جاری کئے جانے والے بیان میں بیرنار کا کہنا تھا کہ ان افراد کو پیرس کے جنوبی مضافات اور لیون کے علاقے سے حراست میں لیا گیا۔ فرانسیسی قانون کے مطابق دہشت گردی کے مقدمات میں حراست میں لئے جانے والے افراد کو 96 گھنٹوں تک حراست میں لیا جا سکتا ہے۔

پیرس کے پراسیکیوٹر کے دفتر سے تعلق رکھںے والے ایک عہدیدار کا کہنا ہے "ملزمان اب پولیس کی حراست میں ہیں۔ ان کی سرگرمیاں شام سے جڑِی ہوئی تھیں۔"

فرانسیسی حکومت کا اندازہ ہے تقریبا 1300 فرانسیسی شہریوں کے شام اور عراق میں 'جہاد' کے لئے بھرتی کرنے والے سیلز سے رابطے ہیں اور ان میں تقریبا 400 ان دونوں ممالک میں جنگجوئوں کے ساتھ مل کر لڑائی میں حصہ لے رہے ہیں۔

یہ گرفتاریاں جنوری میں پیرس میں ہونے والے حملوں کے بعد صدر فرانسو اولاند کی حکومت کی جانب سے اٹھائے جانے والے سیکیورٹی اقدامات کے نتیجے میں سامنے آئی ہیں۔ ان حملوں میں تین حملہ آوروں سمیت 20 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔