.

داعش کے دہشت گردوں کو مصلوب کر دیا جائے: الازہر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی ممتاز دینی درسگاہ کے سربراہ ڈاکٹر احمد الطیب نے داعش کے ہاتھوں اردنی پائیلٹ معاذ الکساسبہ کو زندہ جلائے جانے کے اقدام کو 'کمینی دہشت گرد کارروائی' قرار دیتے ہوئے اپیل کی ہے کہ 'اس دہشت گرد تنظیم کے ارکان کو مصلوب کر کے قتل کیا جائے، ان کے ہاتھ اور پاوں کاٹ دیئے جائیں۔'

بدھ کے روز جاری ایک بیان میں شیخ الازہر نے داعش کے شیطانی دہشت گردوں کے ہاتھوں اردنی ہواباز کو زندہ جلائے جانے کے عمل کو انتہا درجے کی کمینی دہشت گردانہ کارروائی قرار دیا۔

ڈاکٹر احمد الطیب کا مزید کہنا تھا کہ کہ داعش کی خسیس دہشت گردی قرآن کریم کی آیت [إنما جزاء الذين يحاربون الله ورسوله ويسعون في الأرض فسادا أن يقتلوا أو يصلبوا أو تقطع أيديهم وأرجلهم من خلاف أو ينفوا من الأرض ذلك لهم خزي في الدنيا ولهم في الآخرة عذاب عظيم] کے بموجب قرار واقعی سزا کی حقدار ہے۔

ادھر اسلامی ریسرچ اکیڈیمی کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر محی الدین عفیفی نے دہشت گرد تنظیم کی جانب سے اپنی قابل نفرت کارروائیوں کے جواز میں پیش کئے جانے والے دینی استدال کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گرد تنظیم اپنی کارروائیوں کے جواز میں انتہائی کمزور روایات کا حوالہ دیتی ہے۔

ڈاکٹر محی الدین عفیفی نے کہا کہ ایسی کمزور روایات کسی قانونی شرعی اقدام کی بنیاد نہیں بن سکتیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ شرعی احکامات کو ثابت کرنے کے لئے صرف کتاب اللہ اور سنہ رسول اللہ سے ہی استناد کیا جا سکتا ہے اور انہی مآخذ سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ اسلام میں کسی کو جلانا جائز عمل نہیں اور نہ ہی اسے عمل کو ثابت کرنے والی کوئی نص موجود ہے۔