.

نماز کو رسوائی قرار دینے والے کو سوشل میڈیا پر سخت تنقید کا سامنا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانوی فٹ بال کلب لیورپول ایف سی کے ایک فین کی جانب سے دو مسلمانوں کے ہاف ٹائم پر نماز ادا کرنے کے عمل کو رسوائی قرار دینے پر سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر غم و غصے کا مظاہرہ کیا جارہا ہے۔

لیورپول کے فین سیٹفن ڈوڈ نے دونوں نمازیوں کی تصویر سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر پوسٹ کرتے ہوئے لکھا تھا کہ "مسلمان گزشتہ روز کو ہونے والے میچ کے ہاف ٹائم کے موقع پر نماز ادا کررہے ہیں۔" اس کے ساتھ انہوں نے ہیش ٹیگ دے کر رسوائی لکھا ہوا تھا۔

اس تصویر کی اشاعت کے کچھ دیر بعد ہی ڈوڈ کو دیگر ٹویٹر صارفین کی جانب سے 'متعصب' اور ایک 'احمق قرار دے دیا گیا۔ ایک صارف کا کہنا تھا "رسوائی؟ کیوں؟ یہ رسوائی کیوںکر ہوگئی؟ احمق۔

اس تصویر کے ردعمل کے طور پر ایک ٹویٹر صارف نے لکھا "یہ کس رخ سے رسوائی کے ضمرے میں آتی ہے؟" جبکہ ایک اور صارف کا کہنا تھا "یہاں غلط بات صرف یہ ہے کہ تم لیورپول کی حمایت کرتے ہو۔"

اسی دوران کچھ ٹویٹر صارفین نے اس بات کی طرف توجہ دلائی کہ لیورپول کی ٹیم میں دو مسلمان کھلاڑی کھیلتے ہیں۔ یہ تصویر این فیلڈ سٹیڈیم میں مانچسٹر اور بلیک برن روورز کے درمیان ہونے والے میچ کے دوران کھینچی گئی ہے۔