.

عراق میں ایرانی شیعہ ملیشیا کا کوئی وجود نہیں:زیباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے وزیر مالیات ہوشیار زبیاری نے ’العربیہ‘ ٹی وی کو دیے گیے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ ان کے ملک میں دہشت گرد گروپوں کے خلاف جاری جنگ میں ایرانی شیعہ ملیشیا کا کوئی کردار نہیں ہے۔ عراق میں ایرانی ملیشیا کی موجودگی محض میڈیا پروپیگنڈہ ہے جس میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

ایک سوال کے جواب میں ہوشیار زیباری کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں کے خلاف جنگ عراق کی سرزمین پر لڑی جا رہی ہے، جس میں صرف عراقی فوج ہی حصہ لے رہی ہیں۔ دولت اسلامی ’’داعش‘‘ کے خلاف جنگ میں عراقی فوج کو کسی دوسری ملیشیا کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ داعش کے لیے تنہا فوج ہی کافی ہے۔

خیال رہے کہ حال ہی میں عراق کے شمالی سنی اکثریتی شہر تکریت میں داعش کے خلاف عراقی فوج کے آپریشن کے دوران یہ اطلاعات آئی تھیں کہ عراقی فوج کے ہمراہ لڑائی میں ایرانی اور مقامی ملیشیا بھی حصہ لے رہی ہے۔ امریکا نے بھی عراق میں ایران کی بڑھتی مداخلت پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔