.

مصر تیسری بار انقلاب کا متحمل نہیں ہو سکتا: السیسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے صدر ریٹائرڈ فیلڈ مارشل عبدالفتاح السیسی نے شرم الشیخ میں منعقدہ اقتصادی کانفرنس کے اختتامی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملک کے تمام اداروں میں جمہوریت کی بالادستی ان کے ایمان کا حصہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک کسی تیسرے انقلاب کا متحمل نہیں ہو سکتا اور نہ ہی انہیں کسی اور بغاوت کا انتظار یا خطرہ ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق صدر السیسی نے سعودی عرب کے سابق فرمانروا شاہ عبداللہ مرحوم کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ اقتصادی کانفرنس شاہ عبداللہ کا تخیل تھا لیکن سابقہ حکمرانوں نے اسے سال ہا سال تک التواء میں ڈالے رکھا۔

صدر السیسی کا کہنا تھا کہ مصری قوم مختصر عرصے میں دو انقلابات سے گذر چکی ہے اور کسی تیسرے انقلاب کی راہ پر نہیں چل رہی ہے۔ تاہم اگر مصری قوم جب بھی چاہے گی ملک میں تبدیلی لانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’’میں یہ بات فخر سے کہتا ہوں کہ مصری قوم اب بیدار ہو چکی ہے۔ اب مصر زندہ ہے، مردہ نہیں‘‘۔

مصر کی اقتصادی ضروریات پر بات کرتے ہوئے صدر السیسی کا کہنا تھا کہ ان کے ملک کو معاشی استحکام کے لیے 200 سے 300 ارب ڈالر کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ مصری عوام ملک کی معاشی ضرورت پوری کرنے کی بھی صلاحیت رکھتے ہیں۔

صدر السیسی نے مصری مالی امداد کرنے والے ممالک کا خصوصی شکریہ ادا کیا اور کہا کہ ہم عالمی برادری اور دوستوں کے تعاون سے ایک نیا مصر تعمیر کر رہے ہیں جو مصری عوام کی امنگوں کے عین مطابق ہو گا۔