.

حوثیوں کے خلاف آپریشن کی تفصیلات 'العربیہ' کو موصول

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں ایران نواز اہل تشیع مسلک کے حوثی باغیوں کےخلاف سعودی عرب کے ’فیصلہ کُن طوفان' آپریشن کی تفصیلات ’العربیہ‘ نیوز چینل کو موصول ہوئی ہیں۔

العربیہ ٹی وی کو موصول ہونے والی ایک ویڈیو فوٹیج میں بتایا گیا ہے کہ حوثیوں کے خلاف سعودی حکومت کے فوجی آپریشن میں 100 جنگی طیارے اور ایک لاکھ 50 ہزار سپاہی حصہ لے رہے ہیں۔ اس کے علاوہ آپریشن میں خلیجی ممالک، مصر اور پاکستان کا بھی بھرپور تعاون حاصل ہے۔ متحدہ عرب امارات کی جانب سے آپریشن میں 30 لڑاکا طیارے مہیا کیے گئے ہیں۔

قطر نے 10، کویت نے 15، بحرین نے بھی 15 اور اُردن نے چھ جنگی طیارے فراہم کیے ہیں۔ علاوہ ازیں پاکستان اور مصر کے جنگی طیارے اور بحری جنگی جہاز بھی آپریشن میں حصہ لیں گے۔ مراکش نے بھی چھ جنگی طیارے فراہم کرنے کا اعلان کیا ہے جبکہ سوڈان تین جنگی طیاروں کے ساتھ اس آپریشن کا حصہ بن چکا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گذشتہ شب یمن کے دارالحکومت صنعاء میں حوثی شدت پسندوں کے ٹھکانوں پر کی گئی بمباری میں حوثیوں کے کئی فوجی اڈے تباہ کرنے کے ساتھ ساتھ بڑی تعداد میں جنگجو ہلاک کردیے کئے گئے ہیں۔ فضائی آپریشن میں حوثیوں کے زیرقبضہ الدیلمی فوجی اڈہ، چار جنگی طیارے، اڈے پر نصب میزائلوں کی تمام بیٹریاں تباہ کردی گئی ہیں۔ صعدہ گورنری میں مران ڈائریکٹوریٹ میں زور دار دھماکوں کی اطلاعات ملی ہیں۔ وہاں پر حوثیوں نے بھاری مقدار میں اسلحہ اور گولہ بارود ذخیرہ کررکھا تھا جسے تباہ کیا گیا ہے۔